خواجہ سرامعاشرے کا اہم حصہ ہیں،ان سے بدتمیزی چھیڑچھاڑ برداشت نہیں ہو گی،چیف جسٹس پاکستان ،خواجہ سراؤں کو شناختی کارڈ کی فراہمی سے متعلق کمیٹی قائم

خواجہ سرامعاشرے کا اہم حصہ ہیں،ان سے بدتمیزی چھیڑچھاڑ برداشت نہیں ہو گی،چیف ...
خواجہ سرامعاشرے کا اہم حصہ ہیں،ان سے بدتمیزی چھیڑچھاڑ برداشت نہیں ہو گی،چیف جسٹس پاکستان ،خواجہ سراؤں کو شناختی کارڈ کی فراہمی سے متعلق کمیٹی قائم

  


لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) سپریم کورٹ نے خواجہ سراؤں کو شناختی کارڈ جاری نہ کرنے سے متعلق ازخود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران ایک کمیٹی قائم کردی، جو 15 دن میں رپورٹ پیش کرے گی۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2 رکنی بنچ نے لاہور رجسٹری میں خواجہ سراؤں کو شناختی کارڈ جاری نہ کرنے سے متعلق ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی۔

چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ خواجہ سراؤں کے شناختی کارڈ ون ونڈو طریقے سے بننے چاہیئں،سپریم کورٹ تمام اقدامات خود آن لائن مانیٹرکریگی اور میں خود سپر وائز کروں گا،عدالت نے کمیٹی سے فوری طور پر سفارشات طلب کرلیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ خواجہ سرا معاشرے کا اہم حصہ ہیں،جن کے شناختی کارڈ ہیں انہیں ووٹ کا حق ملناچاہئے،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ ان سے بدتمیزی چھیڑچھاڑ برداشت نہیں ہو گی،خواجہ سرائوں کی مخصوص نشست پارلیمنٹ کا کام ہے ،قانون کے دائر ے میں رہتے ہوئے جو کر سکے کریں گے ،بتایا جائے کہ خواجہ سراؤں کے تحفظ کیلئے کیا اقدامات کیے جائیں،خواجہ سراؤں کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے خصوصی عدالتیں قائم کی جائیں گی۔

واضح رہے کہ چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے عیدالفطر کے پہلے روز لاہور کے فاؤنٹین ہاؤس کا دورہ کیا تھا، جہاں خواجہ سراؤں نے انہیں شناختی کارڈ جاری نہ کرنے سے متعلق شکایات کی تھیں۔

جس پر چیف جسٹس ثاقب نثار نے خواجہ سراؤں کی شکایت پر انہیں شناختی کارڈ جاری نہ کرنے کا نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکریٹری پنجاب اور متعلقہ حکام سمیت اخوت فاؤنڈیشن کے امجد ثاقب کو آج طلب کیا تھا۔

سپریم کورٹ لاہور رجسٹری کے باہر موجود خواجہ سراؤں نے چیف جسٹس کے ازخود نوٹس کو تاریخی دن قرار دے دیا۔میڈیا سے گفتگو میں خواجہ سراؤں کا کہنا تھا کہ صرف شناختی کارڈ کا مسئلہ نہیں، انہیں سرکاری نوکریاں بھی دی جائیں۔خواجہ سراؤں نے مزید کہا کہ وہ خود کفیل بننا چاہتے ہیں تاکہ معاشرہ انہیں عزت کی نگاہ سے دیکھے۔

مزید : قومی /علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...