آصف علی زرداری اور فریال تالپور کی گرفتاری حکومت بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے، شیراعظم وزیر

آصف علی زرداری اور فریال تالپور کی گرفتاری حکومت بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے، ...

  

پشاور(سٹی رپورٹر) خیبر پختونخوا اسمبلی میں پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر شیر اعظم وزیر اور ممبر صوبائی اسمبلی احمد کریم کنڈی نے کہا ہے کہ پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور فریال تالپور کی گرفتاری نے ثابت کردیا کہ مرکزی حکومت پاکستان پیپلز پارٹی کے کارناموں اور لیڈروں سے خائف ہے۔ انہوں نے اپنے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی مرکزی اور صوبائی حکومت نے انتقامی سیاست کی انتہاء کردی ہے جس سے اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ انہوں نے سیاست سے شائستگی کا خاتمہ کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی وزیر اعظم عوام کو سبز باغ دکھا تو سکتے ہیں مگر عملی طور پر عوام کی فلاح و بہبود کیلئے کام نہیں کر سکتے اور عوام کی توجہ دعوؤں اور اعلانات سے ہٹانے کے لئے مختلف سیاسی پارٹیوں کے رہنماؤں کی گرفتاریاں عمل میں لائی جاتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ سے پہلے سابق صدر مملکت اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کو گرفتار کرنے سے اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ عوام دشمن بجٹ کے خلاف آواز کو دبانے کیلئے یہ ڈرامہ کیا گیا ہے اب عوام جان گئی ہے کہ تحریک انصاف کے چیئرمین و وزیر اعظم پاکستان عمران خان اصل مسائل سے توجہ ہٹانے کیلئے سیاسی بنیادوں پر مختلف پارٹیوں کے رہنماؤں کے خلاف کارروائیاں کر رہے ہیں۔ احمد کریم کنڈی نے کہا ہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے پیش کردہ بجٹ حقیقی معنوں میں سونامی ثابت ہوا ہے جس کے پیش کرنے کے بعد عوام ہوش و حواص کھو چکے ہیں اور بہت جلد عوام کی جانب سے ختم نہ ہونے والے احتجاج کا سلسلہ شروع کردینگے جو حکومت کیلئے سونامی ثابت ہو گا جو وزیر اعظم سمیت وفاقی اور صوبائی مشیروں و معاونین خصوصی سمیت سلیکٹڈ حکومتوں کو بہا لے جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ جس طریقے سے وزیر اعظم پاکستان و پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان سیاست کر رہے ہیں یہ مستقبل میں انہی کیلئے نقصان دہ ثابت ہو گا۔ انہوں نے دھمکی دی کہ اگر فوری طور پر سابق صدر مملکت و پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور فریال تالپور کو رہا نہ کیا گیا تو وہ احتجاج کا دائرہ مزید وسیع کرنے پر مجبور ہو جائینگے جس کی تمام تر ذمہ داری سلیکٹڈ وزیر اعظم پر عائد ہوگی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -