بجٹ میں کٹوتی کی وجہ سے کراچی تباہ ہوگیاہے،وسیم اختر

بجٹ میں کٹوتی کی وجہ سے کراچی تباہ ہوگیاہے،وسیم اختر

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی نے گزشتہ دس سال کے دوران کراچی کے بجٹ میں کٹوتی کی جس کی وجہ سے کراچی تباہ ہوگیا، آئندہ مالی سال کے میزانیہ میں کل بجٹ کا ایک فیصد کراچی کے لئے مختص کیا گیا جو گزشتہ سال کے مقابلے میں ایک ارب 66 کروڑ کم ہے، گزشتہ مالی سال بجٹ میں مختص رقم پوری نہ ملنے سے 135 منصوبے نامکمل رہ گئے، سندھ حکومت NFC ایوارڈ میں کم رقم ملنے کا بہانہ بناتی ہے مگر ایوارڈ میں 200 ملین کا اضافہ ہونے کے باوجود کراچی کے لئے ترقیاتی رقم کم کی جا رہی ہے، وفاقی حکومت این ایف سی ایوارڈ سے براہ راست حصہ کراچی کو دے جبکہ چیف جسٹس آف پاکستان کراچی کے حوالے سے موموٹو ایکشن لیں، کراچی سے ٹیکسز کی مد میں 450 ارب روپے وصول ہوتے ہیں چند ارب روپے بھی خرچ نہیں ہوتے، آکٹرائے کی مد میں 6 ارب روپے سالانہ کٹوتی ہوتی ہے اب سندھ حکومت بلدیہ عظمیٰ کراچی کو ختم کرنا چاہتی ہے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر ڈپٹی میئر کراچی سید ارشد حسن، چیئرمین بلدیہ وسطی ریحان ہاشمی، چیئرمین بلدیہ شرقی معید انور، چیئرمین بلدیہ کورنگی نیئر رضا اور چیئرمین بلدیہ غربی اظہار احمد خان نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا، میئر کراچی نے کہا کہ حکومت سندھ نے رواں مالی سال 1 کھرب 21 ارب روپے کے میزانیے میں کراچی میگا منصوبوں کے لئے 1.71 ارب روپے مختص کئے ہیں جو کل بجٹ کا تقریباً ایک فیصد ہے جبکہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے سالانہ ترقیاتی پروگرام میں گزشتہ سال کے مقابلے میں 1.66 ارب روپے کم مختص کئے گئے ہیں۔ گزشتہ سال سالانہ ترقیاتی پروگرام میں مختص رقم کا چوتھا کوارٹر نہیں دیا گیا جس کی وجہ سے 135 منصوبے مکمل ہونے سے رہ گئے۔ حکومت سندھ کراچی کے ترقیاتی منصوبوں کی رقم کم کرنے کا NFC میں کمی کا بہانہ بناتی ہے حالانکہ NFC ایوارڈ کے 600 ارب روپے میں اضافہ کرکے 800 ارب روپے کردیا گیا ہے۔کراچی سے پراپرٹی ٹیکسز، بیٹرمنٹ ٹیکسز، ہوٹل سیکٹر سے 450 ارب روپے وصول کئے جاتے ہیں۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -