کراچی، اورنگی ٹاؤن میں مسلح ملزمان کی فائرنگ سے 2پولیس اہلکار شہید 

کراچی، اورنگی ٹاؤن میں مسلح ملزمان کی فائرنگ سے 2پولیس اہلکار شہید 

  

کراچی (کرائم رپورٹر)کراچی کے علاقے اورنگی ٹاؤن میں پیرکی صبح نامعلوم موٹر سائیکل سوار ملزمان کی فائرنگ سے 2 پولیس اہلکار شہید ہوگئے، اہلکاروں کا تعلق اندرون سندھ سے تھا،وزیراعلیٰ سندھ نے پولیس اہلکاروں کے قتل کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے جبکہ کراچی پولیس چیف نے اہل کاروں پر فائرنگ کا نوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی غربی سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔تفصیلات کے مطابق اورنگی ٹاؤن 4نمبرمیں موٹر سائیکل پر سوار نامعلوم افراد نے 2 پولیس اہلکاروں پر فائرنگ کردی، جس کے نتیجے میں دونوں اہلکار موقع پر ہی جاں بحق جبکہ حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔واقعے کی اطلاع ملتے ہی امدادی رضاکار اور پولیس کی بھاری نفری جائے وقوعہ پر پہنچ گئی،لاشوں کوعباسی اسپتال منتقل کرکے شواہد اکٹھے کرلیے گئے ہیں۔پولیس کے مطابق اہلکاروں کو تھانے سے چند قدم کی دوری پر نشانہ بنایا گیا۔2موٹر سائیکلوں پر سوار4افراد نے مقتول اہلکاروں پر نائن ایم ایم سے فائرنگ کی، جائے وقوعہ سے نائن ایم ایم کے 4 خول ملے ہیں۔ دونوں اہلکاروں کو 2، 2 گولیاں ماری گئیں۔پولیس کے مطابق بظاہر واقعہ ٹارگٹ کلنگ کا نتیجہ ہے، مقتولین کے سر اور چہرے پر گولیاں ماری گئیں۔جاں بحق اہلکاروں کی شناخت کانسٹیبل اللہ دتہ اورسپاہی احمد علی کے ناموں سے ہوئی۔کانسٹیبل اللہ دتہ سانگھڑ اور احمد علی شہداد کوٹ کا رہائشی تھا، مقتولین اضافی نفری کے طور پر چند ماہ قبل کراچی آئے تھے۔پولیس حکام کے مطابق دونوں اہلکار پولیس ٹریننگ سینٹر سعید آباد کی بیرکس میں رہتے تھے۔واقعے کے بعد رینجرز اور پولیس کی بھاری نفری نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے جبکہ آس پاس کے علاقوں میں سرچنگ کا عمل  شروع کردیاگیاہے۔ایس ایس پی ویسٹ شوکت کھٹیان کے مطابق دونوں پولیس اہلکاروں کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب وہ گھر سے ڈیوٹی پر اورنگی ٹاؤن تھانے جا رہے تھے۔ جائے وقوعہ سے 9 ایم ایم پستول کے 4 خول ملے ہیں۔ جنہیں فرانزک ٹیسٹ کے لیے بھجوادیا گیاہے۔انہوں نے بتایا کہ شہید اہلکاروں کا سندھ ریزرو پولیس سے تعلق تھا، جبکہ وہ مومن آباد تھانے میں تعینات تھے اور غربی کے علاقے سعید آباد کے رہائشی کمپلیکس میں مقیم تھے۔ ایس ایچ او مومن آباد آصف منور نے بتایا کہ دونوں اہلکار وردی میں نہیں بلکہ سادہ کپڑوں میں ایک ہی موٹر سائیکل پر سوار تھے۔ عینی شاہدین کے مطابق نوری چوک پر اسپیڈ بریکر کی وجہ سے ان کی موٹر سائیکل آہستہ ہوئی تو موٹر سائیکل پر سوار 2  ملزمان نے نائن ایم ایم پستول سے دونوں پولیس جوانوں پر فائرنگ کی۔پولیس کے مطابق دونوں اہلکاروں کے پاس اپنے بچاؤ کیلئے کوئی ہتھیار نہیں تھا اور وہ عام شہریوں کی طرح نشانہ بنے۔ایس ایس پی ویسٹ نے بتایا کہ دونوں پولیس اہلکار گھر سے ڈیوٹی پر تھانے آ رہے تھے کہ اورنگی ٹاؤن نمبر4 میں نوری چوک پر موٹر سائیکل پر سوار 2 ملزمان نے انہیں نائن ایم ایم پستول سے نشانہ بنایا۔ایس ایس پی ویسٹ شوکت کھٹیان نے بتایا کہ واقعہ ٹارگٹ کلنگ ہے اس کی تحقیقات کی جا رہی ہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے پولیس اہلکاروں کے قتل کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے آئی جی سندھ کوہدایت کی ہے ملزمان کو فوری طور پر گرفتار کیاجائے جبکہ کراچی پولیس چیف ڈاکٹرامیرشیخ نے اہل کاروں پر فائرنگ کا نوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی غربی سے رپورٹ طلب کرلی ہے، 

مزید :

صفحہ اول -