شیخوپورہ، چینی کی مہنگے داموں فروخت انتظامیہ نے چپ سادھ لی

      شیخوپورہ، چینی کی مہنگے داموں فروخت انتظامیہ نے چپ سادھ لی

  

شیخوپورہ(بیورورپورٹ)شہر اورمضافات میں چینی کی گرانفروشی کا سلسلہ بدستور جاری ہے تو دوسری جانب انتظامیہ ان ایکشن بھی جاری ہے طارق روڈ،خالد روڈ،لاہور روڈ،ہاؤسنگ کالونی،بھکھی روڈ،محلہ رفاقت آباد،جمیل ٹاؤن،گھنگ روڈ، آرائیانوالہ، نئی آبادی آرائیانوالہ،جمیل ٹاؤن،شیرازگارڈن،محلہ روشن پورہ،رحمت کالونی، خان کالونی،نشمین پارک سمیت متعدد گلیوں اورمحلوں میں بنائی گئی کریانہ کی دکانوں کے مالکان نے حکومتی اعلانا ت کی دھجیاں اڑا کر رکھ دی ہیں نہ ہی حکومتی احکامات پر کوئی عمل ہورہا ہے اور نہ ہی عدالتی احکامات پر چینی 70روپے کلو فروخت کی جارہی ہے،جبکہ دکانداروں کے مطابق چینی فی کلو 73روپے 50پیسے میں مل رہی ہے جس میں دکاندار نے کرایہ اور دکان کا کرایہ،شاپنگ بیگ اور دیگر اخراجات ڈالکر فی کلو چینی 77روپے میں پڑرہی ہے دکاندار گاہکوں کو چینی 70روپے میں کیسے فروخت کرسکیں گے،دوسری جانب خریداروں کے مطابق مین سپلائی ڈیلروں،تاجروں کی طرف سے فروخت کی جانے والی چینی سرکاری نرخوں کے ریٹ کے مطابق فروخت کرنے کاپابند بنانے کے لیے دکاندار کو چینی سستی فراہم کی جائے گی تودکاندار چینی سستی فروخت کرئے گا،مافیا پر ہاتھ ڈالنے کا عام آدمی فارمولا بیان کرتے ہیں کہ ان چوروں کو پکڑنا کون سامشکل کام ہے بڑئے بڑئے سپر سٹوروں پر آنے والی چینی کی رسیدیں چیک کی جائیں دودھ کا دودھ اور پانی کاپانی ہوجائے گا،سروئے کے مطابق ابھی تو چینی مارکیٹ میں کہیں پر غائب اور کہیں پر فروخت کی جارہی ہے لیکن چند دنوں کے بعد چینی دکانوں سے غائب ہوتی ہوئی دکھائی دے گی،خریداروں کا کہنا ہے حکومت کی مثال آگے دوڑ پیچھا چوڑ والی ہوتی جارہی ہے،جب تک ان مافیاز کو سخت سے سخت سزائیں نہیں دی جائے گی اس وقت تک

ان کا قبلہ درست نہیں ہوسکتا،خریداروں کا کہنا ہے کہ ڈی سی اور اے سی فرضی چھاپے مار کر چند دکانوں کو سیل کرتے ہیں جو چند گھنٹوں بعد پھر کھل جاتیں ہیں اگر قانون اسی طرح رہا اور سخت سزائیں نہ دی گئیں تو تاجر مافیاں اور چور ڈیلرز کبھی بھی پکڑمیں نہیں آسکے گے حکومت کو چاہیے کہ وہ قانون میں سختی سے عمل پیرا کروائے اور ڈی سی شیخوپورہ کو ہدایت کی جائے کے اگر آپ کے علاقے میں مہنگے نرخوں پر چینی فروخت کی گئی تو آپ کی چھٹی کروادی جائے گی تو بھی علاقوں میں خود ساختہ مہنگائی کا طوفان دم توڑ سکتا ہے۔

چینی مہنگی

مزید :

صفحہ آخر -