کوئی رکن بجٹ پر عام بحث کے دوران کورم کی نشاندہی نہیں کریگا: پرویز الٰہی

  کوئی رکن بجٹ پر عام بحث کے دوران کورم کی نشاندہی نہیں کریگا: پرویز الٰہی

  

لاہور (آن لائن) سپیکر چودھری پرویزالٰہی کی زیر صدارت پنجاب اسمبلی بزنس ایڈوائزری کمیٹی کا اجلاس ویڈیو لنک پر(بقیہ نمبر43صفحہ6پر)

ہواجس میں ڈپٹی سپیکر سردار دوست محمد مزاری، وزیر قانون محمد بشارت راجہ، ملک ندیم کامران، سمیع اللہ خان،سید حسن مرتضیٰ، سید عباس علی شاہ، خلیل طاہر سندھو، سیکرٹری اسمبلی محمد خان بھٹی اور ڈی جی پارلیمانی امور عنایت اللہ لک شریک ہوئے۔ چودھری پرویزالٰہی نے کہا کہ سالانہ بجٹ پر بحث چار دن ہو گی، جمعرات 18 جون، جمعتہ المبارک 19 جون، سوموار 22 جون اور منگل 23 جون کو عام بحث پر تقریر کیلئے ہر رکن کو پانچ منٹ کا وقت دیا جائے گا البتہ قائد حزب اختلاف اور پارلیمانی لیڈرز کو سپیکر کی اجازت سے زیادہ وقت دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ مناسب ہو گا کہ پارلیانی لیڈرز تقریر کے خواہشمند معزز ارکان کی فہرستیں سیکرٹری اسمبلی کو جمعرات 18 جون تک فراہم کر دیں تا کہ سب کو تقریر کا موقع مل سکے۔سالانہ مطالبات پر بحث اور رائے شماری بشمول کٹوتی کی تحاریک پر کاروائی بدھ 24 جون اور جمعرات 25 جون 2020 کو ہوگی، 25 جون کو مقررہ وقت پر گلوٹین کے اطلاق کے بعد باقی ماندہ سالانہ مطالبات زر پر براہ راست کاروائی ہو گی۔ مسودہ قانون مالیات پر کاروائی جمعتہ المبارک 26 جون 2020 کو ہو گی، ضمنی بجٹ پر عام بحث سوموار 29 جون 2020 کو ہو گی۔ ضمنی مطالبات زر پر بحث اور رائے شماری منگل 30 جون 2020 کو ہو گی۔ 30 جون کو مقررہ وقت پر گلوٹین کے اطلاق کے بعد باقی ماندہ ضمنی مطالبات زر پر براہ راست کاروائی ہو گی جبکہ سالانہ اور ضمنی بجٹ پر عام بحث کے دوران کورم کی نشاندہی نہیں کی جائے گی۔چودھری پرویزالٰہی نے کہا کہ بجٹ تقریر کے دوران اپوزیشن نے ایس او پیز کا خیال نہیں رکھا لہٰذا آئندہ اپنی اپنی سیٹوں پر کھڑے ہو کر احتجاج کرنے پر اتفاق کیا گیا۔ بزنس ایڈوائزری کمیٹی اجلاس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ زراعت، خوراک، تعلیم، صحت، لوکل گورنمنٹ اور امن و امان، کے محکموں پر کٹ موشن پیش کیے جائیں گے، کٹ موشن پر ووٹنگ نہیں ہو گی البتہ ڈیمانڈ پر ووٹنگ ہو گی۔

پرویز الہٰی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -