ریلوے پولیس اہلکاروں کا سینئر میڈیکل آفیسر کے بیٹے پرتشدد

ریلوے پولیس اہلکاروں کا سینئر میڈیکل آفیسر کے بیٹے پرتشدد

  

ملتان(نمائندہ خصوصی)ریلوے پولیس اہلکاروں نے سنئیرمیڈیکل آفیسرریلوے ہسپتال ملتان ڈاکٹرصدف بتول سیدکے بیٹے پرتشددکی انتہا کردی،خاتون ڈاکٹرچھڑانے آئیں توان سے بھی بدتمیزی کی ایس پی ریلوے امجدمنظورخان نے واقعہ کانوٹس لیتے ہوئے ایک اے ایس آئی اورتین کانسٹیبل کومعطل کردیا۔بتایاجاتاہے کہ ایس ایم اوریلوے ہسپتال ڈاکٹرصدف(بقیہ نمبر15صفحہ6پر)

بتول سیداپنے بیٹے کہ ہمراہ اپنی کارپر ملتان کینٹ اسٹیشن آئیں۔ خاتون ڈاکٹربیٹے کواسٹیشن کے مین گیٹ کے سامنے واقعہ آفیسرزکارپورچ میں چھوڑکرجب پلیٹ فارم پر گئیں توریلوے پولیس کانسٹیبلان عامر، عبداللہ، ارسلان نے ان کے بیٹے سے بدتمیزی شروع کردی اوران کے بیٹے کومجبورکیاکہ وہ کارآفیسرزپارکنگ سے نکال کرلے جائیں خاتون ڈاکٹرکے بیٹے نے تعارف کروایاکہ وہ ایس ایم اوریلوے ہسپتال کے فرزند ہیں اس کے باوجودپولیس اہلکاروں نے ایک نہ سنی اورخاتون ڈاکٹرکے بیٹے کوتشددکانشانہ بناڈالاشوروغل سن کرجب خاتون ڈاکٹراورڈیوٹی اے ایس آئی اسلم موقع پرپہنچیاے ایس آئی کی موجودگی میں پولیس کانسٹیبلان نے خاتون ڈاکٹرسے بھی بدتمیزی کی۔بعدازاں ایس پی ریلوے پولیس امجدمنظورخان کوواقعہ کاعلم ہواتوانہوں نے پولیس رویہ پرخاتون ڈاکٹرسے معذرت کی اورتینوں اہلکاروں سمیت ڈیوٹی اے ایس آئی کومعطل کرکے تحقیقات کاحکم دے دیاہے۔بتایاجاتاہے کہ خاتون ڈاکٹرریلوے ہسپتال کی سب سے بردبار اورتحمل مزاج ڈاکٹرکے طورپرجانی جاتی ہیں۔ان کے ساتھ ریلوے پولیس اہلکاروں کے رویہ کے بعددیگرڈاکٹرزاورریلوے افسران نے تحفظات کااظہارکیاہے۔ان کاکہناہے کہ اگرریلوے پولیس اہلکاروں کوقرارواقعی سزانہ دی گئی تواس نوعیت کاواقعہ ان کے ساتھ بھی پیش آسکتاہے۔

تشدد

مزید :

ملتان صفحہ آخر -