وہاڑی: ڈاکٹر کا ضلعی انظامیہ کو منہ توڑ جواب، پرائیویٹ ہسپتال کی سیل توڑ کر کام شروع

  وہاڑی: ڈاکٹر کا ضلعی انظامیہ کو منہ توڑ جواب، پرائیویٹ ہسپتال کی سیل توڑ کر ...

  

وہاڑی(بیورو رپورٹ، نامہ نگار) ضلعی انتظامیہ ڈاکٹروں کے سامنے بے بس ہوگئی، کورونا زدہ ڈاکٹر کے ہسپتال چلانے پر گزشتہ سے پیوستہ رات سیل کیا جانے والا نجی ہسپتال چوبیس گھنٹے بھی سیل نہ رہ سکا،تفصیل کے مطابق گزشتہ سے پیوستہ شب اسسٹنٹ کمشنر احمد نوید(بقیہ نمبر18صفحہ6پر)

بلوچ نے کاروائی کرتے ہوئے ڈی ایچ کیو ہسپتال آرتھوپیڈک ڈاکٹر عدنان اکرم جو کہ کورونا پازیٹو ہیں کے نجی ہسپتال میں کورونا آئسولیشن وائلیشن کی شکایات پر ہسپتال کو سیل کردیا تھا اور انکوائری کا حکم دیا مگر اگلے روز ہی ڈاکٹرز نے مبینہ ہٹ دھرمی اور قانون شکنی کرتے ہوئے بغیر کسی اجازت کے اسسٹنٹ کمشنر کی لگائی گئیں سیل توڑ کر کام شروع کردیا شہریوں مقبول، شہزاد، احمد، توصیف،نمیر، محمود، شاہزیب،خالد و دیگر نے شدید احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ اسسٹنٹ کمشنر و ضلعی انتظامیہ غریب دوکانداروں ریڑھی بانوں اور مزدوروں کے خلاف کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی پر بھاری جرمانے اور انکی دوکانیں سیل کر دیتے ہیں اور عام شہریوں کے گھر محکمہ صحت کے افسران و ضلعی انتظامیہ تماشہ لگاکر محلے بھرمیں بے عزت کرتے ہوئے خوف و ہراس پھیلاتے ہیں جبکہ ڈاکٹرعدنا ن اکرم کی سنگین غفلت کو محکمہ صحت اور ضلعی انتظامیہ نے نا صرف نظر انداز کیا بلکہ قانون شکنی پر کوئی ایکشن نہ لیا گیا شہریوں نے کہا کیا ایسے تمام قانون صرف غریبوں کیلئے ہیں با اثر اور امیر لوگ ان قوانین سے بالاتر ہیں انہوں نے حکام بالا سے فوری نوٹس لے کر ذمہ داران کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا ہے اس حوالہ سے موقف لینے کیلئے جب ڈپٹی کمشنر اور اسسٹنٹ کمشنر سے رابطہ کیا گیا تو ان کی طرف سے کال اٹینڈ نہیں کی گئی۔دریں اثناء دو روز قبل سرکاری رپورٹ میں کرونا پازیٹو آنے والے ڈاکٹر عدنان اکرم کو پرائیویٹ لیب سے فٹنس کا سرٹیفیکیٹ مل گیا گزشتہ سے پیوستہ رات تقریباً رات 10 بجے کورونا رپورٹ مثبت ہونے کے باوجود مبینہ طور پر نجی ہسپتال چلانے پراسسٹنٹ کمشنر وہاڑی نے ہسپتال کو سیل کر دیا تھا لیکن اگلے دن صبح 10 بجے کے قریب کلینک کو ڈی سیل کر دیا گیا زرائع کے مطابق 3روز قبل ڈاکٹر عدنان کی کرونا رپورٹ سرکاری لیب سے بہت آئی تھی جبکہ ڈاکٹر عدنان اکرم نے ہسپتال سیل ہونے کے اگلے روز ایک پرائیویٹ لیبارٹری سے اپنا ٹیسٹ کرایا جس کی رپورٹ شام گئے موصول ہوئی لیکن رپورٹ آنے سے قبل ہی صبح کے وقت مبینہ طور پر ہسپتال کوڈی سیل کرنے پرشہریوں شکیل، عدنان، نثار، اشفاق ودیگرنے انتظامیہ اور محکمہ صحت پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس کا مطلب یہ لیا جائے کہ جتنے بھی سرکاری لیب سے کرونا رزلٹ آئے کیا وہ بھی درست نہیں یا عدنان اکرم کو ڈاکٹر ہونے کا فائدہ مل رہا ہے شہریوں نے فوری طور پر معاملات کی شفاف تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -