سرائے نورنگ،اے سی کے خانسامان کے کہنے پر پولیس کا شہری پر تشدد

سرائے نورنگ،اے سی کے خانسامان کے کہنے پر پولیس کا شہری پر تشدد

  

سرائے نورنگ(نمائندہ پاکستان)اے سی کے خانساماں کے کہنے پر پولیس نے شریف شہری کو برہنہ کرکے تشدد کانشانہ بنایا، رات بھر حوالات میں بندکئے رکھا، 60ہزارنقدی اورٹچ موبائل تھانیدار لے گئے۔ان خیالات کا اظہار حرامہ تالا لکی مروت سے تعلق رکھنے والے مثل خان نے میڈیا کلب لکی مروت میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیاانہوں نے کہا کہ ہمارے گھرانے کی اکثریت سرکاری ملازمین ہیں اورقانون پر عمل کرنے والے لوگ ہیں گزشتہ روزمیرے بیٹے کی منگنی تھی کہ آدھی رات کے وقت اے ایس آئی بمع پولیس نفری آئے اور گھر میں گھس کر خواتین کے سامنے بچوں وغیرہ پرتشدد شروع کیاجب وجہ پوچھی تو انہوں نے بتایا کہ اسسٹنٹ کمشنر کے خانساماں نے ڈی پی اوکوفون کیاہے کہ یہاں ہوائی فائرنگ ہورہی ہے جس پر ہم نے حلفاًبتایاکہ ہم خود قانون کی پاسداری کرنے والے لوگ ہیں ہم قانون شکنی کبھی بھی نہیں کر سکتے اے ایس آئی نے ساتھ تھانے جانے کو کہاتو ہم ساتھ تھانے چلے آئے انہوں نے تھانے میں مجھے برہنہ کرکے شدید تشدد کانشانہ بنایااور ساتھ ہی میرے معذور بھائی صدام حسین پربھی تشدد کیااے ایس آئی نے دھمکی دی گئی کہ اگرصبح تک پستول تھانہ میں جمع نہیں کرایا تودہشت گردی کے دفعات کے تحت اندر کردونگالہٰذا مجبوراً پستول جمع کروادیامثل خان نے مزید بتایا کہ اے سی کے خانساماں کے ساتھ ہماری ناچاقی ہے لیکن ہمیں پولیس نے ہم پر تشدد کیوں کیااور گھر سے ساٹھ ہزار روپے کی نقدی اورٹچ موبائل فوری طور پر واپس دلائی جائے جبکہ پولیس اہلکاروں کے خلاف محکمانہ انکوائری کرکے سزادی جائے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -