ٹرمپ نے دوبارہ الیکشن جیتنے کیلئے چین سے مدد مانگی، جان بولٹن کا انکشاف

ٹرمپ نے دوبارہ الیکشن جیتنے کیلئے چین سے مدد مانگی، جان بولٹن کا انکشاف
ٹرمپ نے دوبارہ الیکشن جیتنے کیلئے چین سے مدد مانگی، جان بولٹن کا انکشاف

  

نیویارک(ڈیلی پاکستان آن لائن)امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق مشیر جان بولٹن نے انکشاف کیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے دوبارہ الیکشن میں فتح یقینی بنانے کے لیے چین سے مدد مانگی تھی۔ اس سے پہلے صدر ٹرمپ نے یکسر مختلف بیان دیا تھا جس میں الزام لگایا تھا کہ چین انہیں ہرانا چاہتا ہے۔

امریکا کی قومی سلامتی کے سابق اور انتہائی قدامت پسند مشیر جان بولٹن نے ٹرمپ کیخلاف اپنی کتاب میں لکھا ہے کہ صدر ٹرمپ نے چینی ہم منصب سے پچھلے برس جون میں جاپان میں ملاقات کے دوران بات چیت کا موضوع اچانک امریکی انتخابات کی جانب کردیا تھا۔

جان بولٹن نے کہا کہ چین کی اقتصادی صلاحیتوں کی بات کی اور صدر شی سے درخواست کی کہ وہ گندم اور سویا بین سمیت زرعی اجناس زیادہ سے زیادہ خرید کر یقینی بنائیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ٹرمپ کے مواخذے کی تحقیقات میں کئی اہم اور چبھتے ہوئے سوالوں پر بات ہونے سے رہ گئی۔ ٹرمپ نے مجرمانہ تحقیقات بھی رکوانے کی کوشش کی تھی اور سیاسی وجوہات کے سبب قانون کے نفاذ سے متعلق امور میں مداخلت کی بھی کوشش کی، وہ انصاف کی راہ میں حائل ہورہے تھے جو ناقابل قبول تھا۔

بولٹن نے کہا کہ صدر ٹرمپ کی معلومات یہ تھیں کہ انہیں پتا نہیں تھا کہ برطانیہ ایٹمی طاقت بھی ہے یا نہیں اور یک بار پوچھا کہ کیا فن لینڈ اس وقت روس کا حصہ ہے۔ وہ تو امریکا کو نیٹو سے نکالنے پر تل گئے تھے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ شمالی کوریا کے سپریم لیڈر سے سن دو ہزار اٹھارہ میں ملاقات جاری تھی تو وزیر خارجہ مائیک پومپیونے پرچی پر لکھ کر بولٹن کو دیا کہ اس کے دماغ میں گوبر بھرا ہوا ہے۔ ایک ماہ بعد ہی پومپیو نے صدر ٹرمپ کی شمالی کوریا پالیسی یہ کہہ کر مسترد کردی کہ اس میں کامیابی کا صفر فیصد بھی امکان نہیں۔

جان بولٹن نے کہا کہ ٹرمپ کے ساتھی پیٹھ پیچھے انکی نقلیں اتارتے تھے۔ ٹرمپ ماہرین کی باتیں سننے کو تیار نہ ہوتے اور سٹاف کو ایک دوسرے سے لڑانا چاہتے تھے۔

مزید :

بین الاقوامی -