مصر نے راستے بند کر دیئے ٗغزہ میں انسانی جانوں کے ضیاع کا خدشہ

مصر نے راستے بند کر دیئے ٗغزہ میں انسانی جانوں کے ضیاع کا خدشہ

  


غزہ( اے این این )فلسطینی وزارت صحت نے خبردار کیا ہے کہ مصر کی جانب سے غزہ کی پٹی کی سرحد بند کیے جانے کے نتیجے میں شہر میں جانوں کے غیرمعمولی ضیاع کا اندیشہ ہے۔مرکز طلاعات فلسطین کے مطابق غزہ وزیرصحت ڈاکٹر مفید احمد نے میڈیا کو بتایا کہ غزہ اور مصر کے درمیان رفح گذرگاہ کی بندش سے سرحد پر پھنسے تین مریض ادویات نہ ملنے کے باعث دم توڑ گئے۔ انہوں نے کہا کہ غزہ کی پٹی میں مریضوں کی بڑی تعداد بیرون ملک علاج معالجے کے لیے جانے کی خواہاں ہے لیکن مصری حکومت کی جانب سے سرحد بند کر دی گئی ہے اور سیکڑوں مریضوں کی بڑی تعداد مزید مسائل سے دوچار ہوئی ہے۔وزیرصحت نے بتایا کہ شہر میں سرحدوں کی بندش کے نتیجے میں غزہ کی پٹی کو بنیادی ضرورت کی ادویات کی فراہمی معطل ہو کر رہ گئی ہے جس کے نتیجے میں شہر کے اسپتالوں اور مریضوں کو سنگین مسائل کا سامنا ہے۔انہوں نے کہا کہ غزہ سے مصرعلاج کے لیے سفر کرنے والے تین مریض راستے ہی میں دم توڑ گئے لیکن مصری حکام نے انہیں سرحد پار جانے کی اجازت نہیں دی۔ غزہ کی پٹی کی واحد بین الاقوامی گذرگاہ رفح پچھلے آٹھ ماہ سے مسلسل بند ہے۔ اس دوران 450 فلسطینی مریضوں نے بیرون ملک علاج کے لیے جانے کی کوشش کی لیکن مصری بارڈر پولیس نے انہیں اپنے ملک میں داخل نہیں ہونے دیا۔ وزیرصحت کا کہنا تھا کہ مجموعی طور پر 145 اقسام کی بنیادی ادویات ناپید ہو چکی ہیں۔

وائٹ ہاؤس کے ایک بیان کے مطابق کریمیا سے متعلق روسی اقدامات یوکرائن کی خود مختاری اور علاقائی سالمیت کے منافی ہیں۔ صدر پوٹن نے کہا ہے کہ کریمیا کا ریفرنڈم بین الاقوامی قوانین اور اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق ہے۔ صدر پوٹن نے امریکی ہم منصب اوباما کے ساتھ بات چیت میں کہا کہ کریمیا کا ریفرنڈم 2008ء میں کرائے گئے اسی ریفرنڈم کی طرح ہے جس کے نتیجے میں کوسووو نے سربیا سے آزادی حاصل کی تھی۔گزشتہ روزیوکرین کے نیم خودمختار علاقے کریمیا میں گزشتہ روز روس سے الحاق کے حوالے سے ریفرنڈم کا انعقاد کیا گیا تھا، جزیرہ نما ریاست میں 15 لاکھ سے زائد افراد ریفرنڈم میں حصہ لینے کے اہل تھے تاہم یوکرین کے حامیوں اور ریاست میں مقیم تاتاری النسل آبادی نے اس کا بائیکاٹ کیا تھا۔یوکرین کے علاوہ امریکا اور مغربی ممالک نے ریفرنڈم کوغیر قانونی قرار دیا ہے۔ادھر ایک روسی نیوز چینل کے معروف میزبان نے امریکہ پر روسی ایٹمی حملے کی دھمکی دیدی ۔واشنگٹن پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق روسی نیوز اینکر دیمتری کیسلو نے نیوز چینل پراپنے خیالات میں صورتحال کو ایک وسیع تر علاقائی سیاق و سباق کے تناظر میں لیا۔انھوں نے کہاکہ روسی ہی وہ واحد ملک ہے جو امریکہ کو’’ تابکار راکھ‘‘ میں تبدیل کرسکتا ہے ۔نیوز اینکر نے نقشے کے ذریعے بتایا کہ امریکی حملے کی صورتحال میں کس طرح روس خودکار طریقے سے جوہری میزائلوں کے ساتھ جواب دے سکتا ہے ۔

مزید :

عالمی منظر -