پٹاک انتظامیہ کی ورکرزیونین کے عہدیداروں کیخلاف انتقامی کارروائی

  پٹاک انتظامیہ کی ورکرزیونین کے عہدیداروں کیخلاف انتقامی کارروائی

  



لاہور(سٹی رپورٹر)محکمہ پٹاک میں ہونے والی خریداری میں گھپلے کے خلاف وزیراعظم پورٹل پر درخواست دینے پر انتظامیہ نے ورکرز یونین پٹاک کے عہدیداروں کے ہی خلاف انتقامی کارروائی شروع کر دی ہے۔ تفصیلات کے مطابق ورکرز یونین پٹاک کے جنرل سیکرٹری نسیم شاہ نے وزیراعظم پورٹل پر دی جانے والی درخواست میں الزام لگایا ہے کے چند سال قبل سابق ڈی جی کی سربراہی میں تین رکنی کمیٹی نے بلیو مولڈنگ مشین کی خریداری 12 لاکھ روپے میں یہ کہ کر کی یہ بلیو مولڈنگ درآمد کی گئی ہے جبکہ یہ مولڈنگ پاکستان میں ہی موجود ایک شخص سے خریدی گئی تھی دوسری جانب پاکستان انڈسٹریل اسسٹنٹس سنٹر (پٹاک) بلیو مولڈنگ مشین خود بھی بنا سکتا ہے ایک مرتبہ خریداری پر اسی کمیٹی نے دوبارہ اسی بلیومولڈنگ مشین کی خریداری 14 لاکھ روپے میں کی یہ خریداری محض کاغذوں میں ہوئی اور محکمہ سے 14 لاکھ روپے لے گئے جبکہ اس مولڈنگ کا آج تک استعمال نہیں ہو کیونکہ اس کی کوئی ضرورت نہیں تھی اس طرح سرکاری خزانے کو 26 لاکھ روپے کا نقصان پہنچایا گیا جس کے ذمیداران میں پٹاک کے موجودہ جی ایم عرفان ظہیر اور آپریشن کے آفیسر عرفان جرار ہیں تین رکنی کمیٹی کے دو اراکین یہی دونوں افسران تھے وزیراعظم پورٹل پر دی جانے والی درخواست پر کارروائی شروع ہوتے ہی پٹاک انتظامیہ نے ورکرز یونین کے صدر چوہدری ریاض,جنرل سیکرٹری نسیم شاہ سمیت دیگر عہدیداروں کے خلاف انتقامی کارروائی کرتے ہوئے انکے خلاف مختلف انکوئریاں شروع کر دی ہیں ورکرز یونین کے جنرل سیکرٹری نسیم شاہ کا کہنا ہے کہ ہم ڈرنے والے نہیں ہم نے درخواست کے ساتھ ثبوت لف کئے تھے اور وقت آنے پر متعلقہ افسران کو ثبوت فراہم بھی کر دیں گے جبکہ پٹاک کے ایڈمن آفیسر کا کہنا ہے بلیو مولڈنگ کی خریداری کا معاملہ بہت پرانا ہے ابھی کچھ نہیں کہا جاسکتا۔

انتقامی کارروائی

مزید : میٹروپولیٹن 1