اسلام کیخلاف زہر اگلنے والے فرانسیسی میئر کو فوری سزا مل گئی

اسلام کیخلاف زہر اگلنے والے فرانسیسی میئر کو فوری سزا مل گئی
اسلام کیخلاف زہر اگلنے والے فرانسیسی میئر کو فوری سزا مل گئی

  

پیرس (نیوز ڈیسک) فرانس سے اسلام اور مسلمانوں کے خاتمے کے ناپاک خواب دیکھنے والے فرانسیسی سیاستدان کو لینے کے دینے پڑ گئے۔

یونین فار اے پاپولر موومنٹ (UMP) سے تعلق رکھنے والے سیاستدان رابرٹ چارڈن، جو کہ جنوبی شہر وینیلیس کے میئر بھی ہیں، نے جمعرات کے روز سوشل میڈیا ویب سائٹ ٹویٹر پر متعدد دفع ایک ٹویٹ بھیجی جس میں کہا، ”مذہب اسلام پر 18 اکتوبر 2027ءسے مکمل طور پر پابندی عائد کردی جائے گی۔ اس مذہب کے پیروکاروں کو سرحد پار پہنچادیا جائے گا۔“ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ فرانس کو سیکولرازم کا قانون ختم کرکے آئین میں تبدیلی کرنی چاہیے جس کے مطابق ریاست عیسائی عقیدے کی حمایت کرے گی۔

مزیدپڑھیں:برطانوی سپر مارکیٹ میں فروخت ہونے والےحلال کھانے میں حرام کی ملاوٹ ،مسلمان سراپا احتجاج

بدبخت سیاستدان کے لغو بیانات پر کنزرویٹو پارٹی، سابقہ صدر نیکولس سارکوزی اور انسانی حقوق کے اداروں کی طرف سے سخت تنقید کی گئی۔ UMP پارٹی کے نائب صدر نیتھالی کوسیاسکو موریزٹ کا کہنا ہے کہ انہوں نے لغو بیانات جاری کرنے والے میئر کو پارٹی سے خارج کرنے کے لئے احکامات دے دئیے ہیں۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ میئر کے بیہودہ بیانات پارٹی کے نظریات کی عکاسی نہیں کرتے۔

یاد رہے کہ فرانس میں تقریباً 70 لاکھ مسلمان آباد ہیں جو کہ کسی بھی یورپی ملک میں مسلمانوں کی سب سے بڑی تعداد ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس