حکومتی فیصلوں میں ق لیگ کی مشاورت شامل، نیب آزاد سرکار مداخلت نہیں کرتی: چودھری سرور

  حکومتی فیصلوں میں ق لیگ کی مشاورت شامل، نیب آزاد سرکار مداخلت نہیں کرتی: ...

  

ٹوبہ ٹیک سنگھ،لاہور(نمائندہ خصوصی، ایجنسیاں) گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ ق لیگ سمیت تمام اتحادی حکومت کے ساتھ ہیں اور حکومت بھی تمام فیصلوں میں اتحادیوں سے مشاورت کرتی ہے، نیب سمیت کسی ادارے میں حکومتی مداخلت نہیں احتساب کے تمام ادارے فیصلے کرنے میں آزاد ہیں، مارکیٹوں کو کھولنے کی اجازت دینے اور لاک ڈاؤن میں نرمی کا مقصد معاشی مسائل میں کمی لانا ہے اس کا مطلب یہ نہیں کہ کورونا ختم ہو چکا ہے،ہم پنجاب ڈویلپمنٹ نیٹ ورک کے تحت اب تک ساڑھے سات لاکھ غریب خاندانوں میں راشن فراہم کر چکے ہیں اور یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے ابوا ہسپتال میں کورونا ٹیسٹنگ لیب کا افتتاح اور تحریک انصاف کے ایم این اے ریاض فتیانہ کو غریب خاندانوں کیلئے سرور فاؤنڈیشن کی جا نب سے راشن کی فراہمی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پرصوبائی وزیرآشفہ ریاض فتیانہ، تحریک انصاف کے ایم این ا ے ریاض فتیانہ، سرور فاؤنڈیشن کی چیئر پرسن بیگم پروین سرور،پی ٹی آئی سوشل میڈیا کے ضلعی کوآرڈی نیٹرمیاں وقار عظیم سباجکے سمیت دیگر سیاسی رہنماء بھی موجود تھے،گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے کہا کہ ہماری حکومت نے اپوزیشن کی کسی جماعت کی قیادت کے خلاف کوئی مقدمہ نہیں بنایا۔ نیب سمیت احتساب کے دیگر اداروں میں جو مقدمات ہیں وہ ماضی میں اپوزیشن کی جماعتوں نے ہی ایک دوسرے کے خلاف بنائے ہیں۔دریں اثنا لاہور میں کورونا کے خلاف جنگ میں غر یب خاندانوں کی مدد کر نیوالی سماجی کارکنوں کے اعزاز میں گور نر ہاؤس لاہور میں منعقدہ تقر یب سے خطاب اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کورونا سے بچاؤ کیلئے بز نس کیمونٹی اور عوام نے غیرذمہ داری کا ثبوت دیا تو یہ ملک وقوم کیلئے تباہ کن ہوگا‘لاک ڈاؤن سے مڈل کلاس اور مزدور طبقہ زیادہ متاثر ہوا ہے حکومت کو پریشانی ہے کہ لوگ کورونا سے شاید نہ مریں، بھوک سے مر سکتے ہیں‘ حکومت نے معاشی مسائل کو مدنظر رکھتے ہوئے کرونا سے نمٹنے کی پالیسی بنائی۔ مالی امداد کا پروگرام چل رہا ہے، 100 ارب روپے سے زائد تقسیم ہو چکے ہیں۔ کورونا وائرس پاکستان کا ہی نہیں پوری دنیا کا مسئلہ ہے کورونا کے خلاف فرنٹ لائن پر لڑنے والوں کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔

گورنر پنجاب

مزید :

صفحہ آخر -