میری کہانی ؛خوف اور مایوسی

میری کہانی ؛خوف اور مایوسی
میری کہانی ؛خوف اور مایوسی

  

 ایک فون کال آئی کہ عمران ظفر  صاحب ہیں جواب دیا جی ہاں ؛  تو  فون کرنے والے نے بتایا کہ میں  فلاں قومی اخبار کا نمائندہ ہو ں اور  تھانہ صدر جلالپور جٹاں میں آپ کے خلاف وال چاکنگ کا مقد مہ درج کیا گیا ہے اور آپ کے خلاف اخبار میں خبر لگنے لگی ہے اگر اپنے خلاف خبر نہیں لگوانی تو  جلالپور جٹاں آ کر ملاقات کر لو ۔ میں نے تھوڑی دیر بعد جلالپور تھانہ سٹی پھر تھانہ صدر فون کر کے اپنے خلاف کسی ایف آئی آر کا پوچھا تو انہوں نے  1 گھنٹے بعد دوبارہ فون کرنے کو  کہا دوبارہ فون کرنے پر معلوم ہوا  کہ میرے خلاف گاؤں ہرداس پور میں دیوار پر کاروبار سے متعلقہ اشتہار  آویزاں کرنے پر مقدمہ درج کر لیا گیا ہے ۔ اگلے دن اسی شخص  کا دوبارہ فون آیا اور  ملاقات کے لئے مجبور کیا گیا اس  وقت  میں سٹی گجرات سے ملحقہ شادمان کے پاس اپنی موجودگی ظاہر  کی تو صاحبِ جلد باز ادھر پہنچ  گئے اور بتانا شروع کر دیا کہ کل آپ کے دوبارہ رابطہ نہ کرنے پر اخبار میں خبر لگا دی گئی تھی  کہ تاجر عمران کے خلاف وال چاکنگ کرنے پر تھانہ صدر جلالپور جٹاں میں مقدمہ درج کر لیا گیا ہے  مگر تاجر کی اصل نشاندہی کو چھپایا گیا ہے اور تھوڑی گفتگو کے  بعد  شعبہ صحافت سے جڑے جلد باز  صحافی نے جیب خرچ کا مطالبہ کر دیا مگر میں نے جیب خرچ دینےکی  بجائے اخبار میں نشاندہی کے ساتھ دوبارہ خبر دینے کی تجویز دے  کر اپنی راہ لی اور شام کو تھانہ صدر دوبارہ فون کر کے وال چاکنگ کی جگہ دریافت کی تو معلوم  ہوا میرے اپنے گاؤں میں ایک دکان کے سامنے اشتہار آویزاں تھا  ؛ ہوا یوں کہ نئی تیار ہونےوالی  الرحیم مارکی جو کہ چک کالا میں  تعمیر کی گئی ہے  اور  گاؤں  کے فرد کی مارکی کی تعمیر کو  سراہتے ہوئے چند دوستوں نے  اپنے گاؤں کے چوراہے پر باعث مسرت و  فخر کے  طور پر اعزاز یہ اشتہا ر آویزاں کر دیا تھا جس پر فدوی  کا نام اور فون نمبر لکھا ہوا  تھا اور ایک قابلِ احترام پولیس آفیسر نے دیوار پر لگائے گئے  5 دیگر کاروبار سے متعلقہ اشتہا رات کے درمیان میں لگے صرف اس مارکی والے اشتہار کو اتار کر وال  چاکنگ کا مقدمہ درج کر لیا ۔ عدالت سے ضمانت کروانے کی غرض سے  گیا تو ضمانت کے چکرمیں چند ہزار روپے کا ضیاع  اور سب سے بڑھ  کر پڑھائی متاثر ہوئی اور  لیکچر نہ لے سکا کیونکہ فدوی  یونیورسٹی آف گجرات میں جرنلزم کا ریگولر طالب علم تھا  اور ابھی تک  ایف آئی آر اور اس سے متعلقہ نہ کئے جانے والے جرم کی سزا کا  خوف  سر پر ابھری تلوار کی طرح براجمان  ہے۔ 

ایک مقدمہ کا ملزم ہو کر بہت سے  تجربات کا سامنا کیا اور اپنے  موجودہ نظامِ قانون سے مایوسی ہوئی جیسا کہ اطلاع دینے والے محترم صحافی کی دھمکی آمیز فرمائش   اور 5 اشتہارات کی موجودگی میں  ایک صرف اشتہار کو زیرِ تفتیش  لانا جیسا کہ ایف آئی آر کا اند راج جان کر فدوی نے نشاندہی والی  جگہ پہنچ کر دیگر آویزاں اشتہارات کی  تصاویر بھی موبائل فون  محفوظ کر لی تھیں اور اس کے بعد  کچہری میں 20 روپے والے کام کے  500 اور 200 یا 300 روپے والے کام کے  بالترتیب 2000 یا 3000 ر وپے ادا کرنے پڑے اور پھرتھانہ  میں جا کر نہ کئے جانے والے جرم  اور اگر جرم ہو بھی گیا تو بجا ئے کہ ایک نئے کاروبار کو مدنظر  رکھ کر انتباہی نوٹس جاری کرنے  کے 3 دن صبح سے شام تک عدالت کے  احاطہ میں موجود رہنا اور تھانہ جا کر ہاتھوں کی انگلیوں کو کالا کر کے فنگر پرنٹ دینااور پھر ایک تحتی پر اپنا نام اور بائیو ڈیٹا لکھوا کر دیوار کے ساتھ  کھڑا ہو کر ایک مجرم کی طرع تصویریں کھنچوانا  اور سب سے بڑھ کر جاری تعلیمی سرگرمی پر اثرات  مرطب ہونا شائد ان لوگوں کے لئے  مسئلہ نہیں ہو گا جو بند کمروں  میں بیٹھ کر دورانِ گفتگو اظہارِ دوراندیشی کے کلمات جھاڑنے کےلئے کہتے ہیں کہ پاکستان کا کیا بنے گا یا ہمیں تو کوئی مسئلہ  نہیں مگر مجھے مسئلہ اور اظہارِ تشویش ضرور ہے ۔ اس لئے اپنے مستقبل کے انجام کی پروا کئے بغیر  پولیس کے اعلٰی افسران ، بزنس  کمیونٹی سے جڑے عناصر اور عدالتِ عالیہ سے سوال ضرور کرنا چاہوں  گا کہ کیا ہم  اس کہانی سے جڑے  الفاظ اور مسائل کو ملکِ  پاکستان میں گزشتہ 70 سال کےعرصہ میں  بھی درست نہیں کر سکے تو کیا فائدہ ہمارے نظامِ تعلیم و آگاہیِ قوانین کا؟

 یاد رہے اس کیس میں میرے پاس اگرچہ صاحب استطاعت مگر  اچانک کچھ عرصہ کے لئے مشکل  حالات ہونے  کی وجہ سے  وکیل صاحب کو من پسند  فیس  وقت پر نہ ادا نہ کرنے  کی وجہ سے وکیل صفائی کے پیش  نہ  ہونے پر سیشن جج صاحب گجرات جناب عبدالقدیر بٹ نے میری بے گناہی  اور بنا کسی ثبوت کے فقط تفتیشی افسر کی رپورٹ کو حق مان  مقد مہ نمبر 378/17 صدر جلالپورجٹاں  گجرات کی ایف آئی آر کی مد میں مجھے مبلغ 3000 ہزار جرمانہ  اور کچھ گھنٹے عدالت کے اندر رکے رہنے والی سزا سنا کر میرےمستقبل پر داغ لگا دیا اور میرا کریکٹر سرٹیفیکیٹ داغدار بھی کردیا اور اس کے ساتھ ساتھ میرے ضمیر پر ایک کار ی ضرب بھی لگادی۔اور دل و دماغ  میں عدالتی نظام سے نفرت کا بیج بو دیا ۔ 

 ۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں ۔

۔

اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیساتھ بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’zubair@dailypakistan.com.pk‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں۔

مزید :

بلاگ -