مظفرگڑھ کینال سیکشن ہیڈ بکائنی: جگہ جگہ غیر قانونی موگے، پائپ لگا کر سرکاری پانی چوری کرنیکا انکشاف 

مظفرگڑھ کینال سیکشن ہیڈ بکائنی: جگہ جگہ غیر قانونی موگے، پائپ لگا کر سرکاری ...

  

چوک پرمٹ (نمائندہ پاکستان ) مظفرگڑھ کینال سیکشن ہیڈ بکائنی سے نکلنے والی نہریں جتوئی برانچ,سہراب ڈسٹی,کوڑے خان ڈسٹی,گل مائنیر,گل واہ,رتن مائینر,سوہنی نہرڈسٹی سمیت کنکریٹ  شدہ نہروں میں اسوقت چھ سو کے قریب بااثر مقامی زمینداروں کے ناجائز موگے قائم ہیں اور سرعام دن دہیاڑے نہروں پر ٹریکٹروں کے زریعے بڑے بڑے پائپ لگا کر روزانہ کی بنیاد پر کئی مربعہ اراضی سرکاری پانی (بقیہ نمبر10صفحہ6پر)

سے سیراب کی جارہی ہیں جتوئی برانچ کو کنکریٹ کرنے کے لیے 42 کروڑ کی گرانٹ سے کنارے پختہ کیے گے مگر پانی چوروں نے کنکریٹ شدہ نہروں کو کٹ لگا کر کنارے ہی توڑ ڈالے.سرکاری طور پر منظور شدہ موگے بھی بڑے ڈال کر رقبہ سیراب کیے جارہے ہیں سرکاری طور,پر منظور شدہ نہروں کی مرمتی کے لیے سالانہ لاکھوں کے فنڈز جاری ھوئے مگر اجتک ان موگوں کی مرمتی نہ ھو سکی ہے گذشتہ روز ان نہروں کا  وزٹ کیا گیا تو جگہ جگہ بڑے بڑے ناجائز موگے دیکھنے کو ملے  مقامی لوگوں نے بتایا کہ مقامی بیلدار ان سے ماہانہ پیسے لیتے ہیں اور خود ہی موگے ڈالنے کی اجازت دیتے ہیں زرائع کے مطابق اسوقت ان نہروں سے چھ سو کے قریب ناجائز موگے قائم ہیں زرائع کے مطابق مقامی طور پر عرصہ بیس سالوں سے تعنیات بیلدار ایک ہی جگہ پر تعنیات ہیں زرائع کے مطابق سوہنی نہر کے مغربی کنارے پر پل چڑی والا کے مقام پر دو کلو میٹر کے فاصلے پر پچاس ناجائز موگے قائم ہیں اور مقامی ذمیندار فصلیں کاشت ہے اور انہوں نے سرعام نہروں کے کنارے ٹریکٹروں کے زریعے پائپ لگا کر سرکاری پانی چوری کرتے ہیں رابطہ پر سب انجینئر محمد جعفر نے بتایا کہ ہمیں ان پانی چوروں کی اطلاع ملی میں موقع پر پہنچا تو یہ بندے پانی چوری میں ملوث پائے گے مگر الٹا بیلدار جاوید اپنے درجن بھر ادمیوں کو لیکر وہاں آ گیا اور اتارے گے پائپ بھی چھین لیے اور ہمارے کام میں مداخلت کرتے ھوئے ہمارے ساتھ لڑنے جھگڑنے لگا میں نے اسکی رپورٹ ایس ڈی او جتوئی اور ایکسئن انہار کو دی ہے مگر اس کے خلاف کوئی کارروائی نہ کی گی ہے انہوں نے بتایا کہ مذکورہ بیلدار جو کہ مقامی طور پر عرصہ بیس سال سے تعنیات ہے اور وہ ناجائز موگے ڈلوا کر بااثر زمینداروں سے ماہانہ ہزاروں روپیے منتھلی لیتا ہے مجھ پر منتھلی لینے کا الزام جھوٹا ہے مجھے تعنیات ھوئے ڈیڑھ ماہ کا عرصہ ھوا ہے پانی چوروں کے خلاف پندرہ مقدمات کا اندراج کروایا ہے جبکہ دیگر استغاثہ بھی جمع ہیں مگر پولیس ہمارے ساتھ تعاون نھی کرتی ہے اور سیاسی مداخلت بھی زیادہ ہے جبکہ بیلداروں نے کہا کہ سب انجینئر جعفر پانی چوروں کی سرپرستی کرتا ہے اور ماہانہ لاکھوں روپیے لیتا ہے پانی چوروں کے پائپ اتارنے پر الٹا سب انجینئر نے بیلدرا کے خلاف مقدمہ کا اندراج کرایا بلکہ ہمارے پاس سب انجینئر کے وائس میسیج بھی ثبوت ہیں کہ پانی چوروں کے خلاف کارروائی نہ کریں اسوقت ان نہروں میں رنوجہ,جوئیہ,لوہاچ,ودیگر اقوام,کے کئی بااثر مقامی زمیندار پانی چوری میں ملوث ہیں جب کہ کاشتکار سالانہ لاکھوں کا ٹیکس ادا کرنے کے باوجود بھی سرکاری پانی سے اپنی فصلات سیراب کرنے سے محروم ہیں کیونکہ اجتک ٹیل تک پانی کی فراہمی ممکن نہ ھو سکی ہے مظفرگڑھ کینال واحد کینال ہے جتوئی برانچ اور ہیڈ بکائنی سیکشن سے کئی نہریں نکلتی ہیں انہار عملہ اور بیلدار پانی چوروں کی سرپرستی کرتے ھوئے لاکھوں کماتے ہیں جبکہ متعلقہ انہار عملہ کے خلاف کئی بار کاشتکار پانی کی فراہمی نہ ھونے پر احتجاج ریکارڈ کراچکے ہیں انہوں نے چیف سیکرٹری اور وزیر ابپاشی سے مطالبہ کیا ہے کہ ان نہروں سے لگے سینکڑوں ناجائز موگے ختم کرا کر متعلقہ انہار عملہ کے خلاف محکمانہ کارروائی کا حکم دیتے ھوئے کرپٹ بیلدار اور افسران کو معطل کر کے ایماندار عملہ تعنیات کر کے کاشتکاروں کو ٹیل تک پانی کی فراہمی ممکن بنائی جا سکے۔

الزامات

مزید :

ملتان صفحہ آخر -