وہاڑی،شعبہ آر آر ای میںکروڑوں روپے کی مبینہ کرپشن 

وہاڑی،شعبہ آر آر ای میںکروڑوں روپے کی مبینہ کرپشن 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 میلسی (سٹی رپورٹر)مبینہ طور پر معلوم ہوا ہے کہ میپکو کے شعبہ آر آر ای وہاڑی میں کروڑوں روپے کی مبینہ کرپشن ہوئی ہے عالم پور فیڈر تقریبا دو سال سے مکمل نہ ہوسکا۔چند پولز پر کنڈکٹر ڈال کر بقیہ کام ادھورا چھوڑ دیا۔ذرائع کے مطابق عالم پور فیڈر کا مٹیریل گڑھا موڑ فیڈر پر لگایا گیا ہے اور نامکمل فیڈر کو کاغذوں میں مکمل دِیکھا دیا گیا ہے۔اسی طرح امین شہید فیڈر،خان پور فیڈر اور غازی عباس فیڈر بھی مکمل نہ ہوسکے۔موضع دھلو کی بستی ریت والی،دوکوٹہ(بقیہ نمبر22صفحہ6پر )
 کی آبادی بستی دیس پورہ،چکنمبر 261 ڈبلیو بی ٹبہ سلطان پور بستی کمہاراں والی،موضع خان پور،موضع بدھو کی بستی پہوڑاں والی،چاہ مھٹو والا چکنمبر 125 ڈبلیو بی مترو،رشید آباد کہروڑپکا روڑ،محلہ کچا کوٹ چاہ نیولاں والا اور موضع فتح پور سمیت دیگر آبادیوں میں سابق ممبران قومی اسمبلی محمود حیات خان عرف ٹوچی خان،سعید احمد خان منیس اور محمد اورنگزیب خان کھچی نے ایل ٹی پروپوزل کی سکمیز منظور کروائیں جن کی مالیت کروڑوں روپے ہے۔حکومت پاکستان نے فیڈرز اور ایل ٹی پروپوزلز کے لیے اربوں روپے عوام کی سہولت کے لیے فراہم کیے لیکن تقریبا دس سال قبل منظور ہونی والی سکیمز بھی شعبہ آر آر ای وہاڑی میں تعینات رہنے والے ایکسیئنز،ایس ڈی اوز اور لائن سپرنٹنڈنٹس کی مبینہ نااہلیوں کی وجہ سے پراجیکٹ مکمل نہ ہوسکے اور عوام کو سہولیات نہ مل سکیں۔ایل ٹی پروپوزلز کا سامان آج بھی مختلف ڈیروں پر موجود ہے۔لیکن سکیمز کو مکمل نہیں کیا جارہا۔شہری نے پی ڈی کنسٹرکشن میپکو ملتان کو مسائل سے آگاہ کیا تو انہوں نے ایکسین آر آر ای وہاڑی کو فون کرکے شہری سے موقف جاننے کا حکم دیا۔ایکسین آر آر ای نے صحافیوں کو بتایا کہ ایک حکومت آتی ہے کام شروع کرواتی ہے دوسری آکر کروا دیتی ہے۔جس کی وجہ سے منصوبہ جات مکمل نہ ہوسکے۔عالم پور فیڈر کو مکمل نہ کرنے کی وجہ گرڈ میں گنجائش نہیں ہے۔دوسری وجہ اگر مکمل کردیں تو کنڈکٹرز چوری ہونے کا خدشہ ہے۔اب مٹیریل کے ریٹ بڑھ چکے ہیں جس کی وجہ سے بھی مسائل کا سامنا ہے۔عوامی سماجی حلقوں نے وزیراعظم پاکستان،چیف ایگزیکٹو میپکو ملتان سے مطالبہ کیا ہے کہ اعلی سطحی تحقیقاتی کمیٹی بنا کر مبینہ کرپشن میں ملوث افسران و اہلکاروں کے خلاف کارروائی کی جائے۔