کور کمانڈر ہاؤس حملے کی ہوشربا تفصیلات سامنے آگئیں

کور کمانڈر ہاؤس حملے کی ہوشربا تفصیلات سامنے آگئیں
کور کمانڈر ہاؤس حملے کی ہوشربا تفصیلات سامنے آگئیں

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (ویب ڈیسک) لاہور میں 9مئی کو کور کمانڈر ہاؤس پر شر پسندوں کے حملے کی ہوشربا اہم تفصیلات سامنے آگئیں۔

حکومتی ذرائع کے مطابق دوپہر 2:35 سے لے کر 2:40 تک پرتشدد مظاہرین زمان پارک لاہور میں اکٹھے ہونا شروع ہوئے، 2:55 سے 3:20 کے دوران ڈاکٹر یاسمین راشد اور دیگر شر پسند قائدین لبرٹی چوک پہنچے۔ سہہ پہر 4:05 پر مشتعل ہجوم نے کینٹ کا رُخ کیا اور 4:05 پر پہلے سے شرپسندوں کا ایک ٹولہ شیرپاؤ برج پر پہنچا ہوا تھا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق  شام 5:15 پر پہلا دھاوا کور کمانڈر ہاؤس پر بولا گیا جو 25 سے 30 افراد پر مشتمل تھا لیکن اُسے واپس دھکیل دیا گیا، 5:27 پر شرپسندوں نے جناح ہاؤس پر بتدریج بڑھتی ہوئی تعداد کے ساتھ دوبارہ انٹری کی اور 5:30 سے 6 بجے تک ان شرپسندوں نے بھرپور انداز میں وہاں شدید توڑ پھوڑ کر کے اسے شدید نقصان پہنچایا، پھر 6:07 پر  مکمل جلا دیا گیا۔ شام 6:10 پر فورٹریس سے شرپسندوں کی مزید کمک جناح ہاؤس پہنچ گئی جنہوں نے تباہ کاریوں میں اپنا کردار ادا کیا، 6:13 پر مزید ایک اور جتھہ دھرم پورہ سے جناح ہاؤس پہنچ گیا۔ شام 6:30 سے رات 7:55 تک تقریباَ 2ہزار لوگوں نے اجتماعی طور پر کور کمانڈر ہاؤس کو مکمل تباہ کر دیا اور تباہی کا یہ سلسلہ رات 8 بجے تک جاری رہا۔

اس کے ساتھ ساتھ شرپسندوں نے ملٹری انجینئرنگ سروسز کے دفتر پر بھی حملہ کر کے تباہی مچائی۔ اس کے علاوہ ملک کے باقی علاقوں میں تقریباً 200 سے زائد جگہوں پر دو سے تین گھنٹے کے وقت میں ان شر پسندوں نے ملک کی اینٹ سے اینٹ بجا دی جو سارے پاکستان نے اپنی آنکھوں سے دیکھی۔ان ہوشربا انکشافات سے یہ واضح ہوتا ہے کہ جناح ہاؤس پر پوری منصوبہ بندی اور کوارڈینیشن کے ساتھ منظم طریقے سے حملہ کیا گیا تھا جس میں چند شر پسند رہنماؤں کی براہ راست شرکت اور رہنمائی شامل تھی۔