ترک صدر کی آمد پر سیاسی جماعتوں کا اتحاد کاپیغام دینا چاہیے تھا،سردارنسیم

ترک صدر کی آمد پر سیاسی جماعتوں کا اتحاد کاپیغام دینا چاہیے تھا،سردارنسیم

راولپنڈی(جنرل رپورٹر) مسلم لیگ (ن) میٹرو پولیٹن راولپنڈی کے صدر سردار نسیم خان نے کہا ہے کہ ترک صدر طیب اردوان کی آمد پر پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں تمام پارلیمانی پارٹیوں کو اتحاد کا پیغام دینا چاہے تھا ‘ ایک پارٹی کی جانب سے بائیکاٹ کا فیصلہ ملکی مفاد کے منافی تھا، ترکی امت مسلمہ کے لیڈر کے طور پر کام کر رہاہے ۔انہوں نے کہا کہ ترکی نے ہمیشہ ہر مشکل کی گھڑی میں پاکستان کا ساتھ دیا جس پر پوری قوم ان کے اس کردار کو سراہتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ خطے میں اس وقت پاکستان کے سب سے گہرے مراسم ترکی اور چین کے ساتھ ہیں ‘دونوں ممالک ہمارے ساتھ کھڑے ہیں اور ہم ان کے ساتھ کھڑے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کے مشتر کہ اجلاس کے دوران تمام پارلیمانی پارٹیوں کو آج کے دن یہ پیغام دیا جانا چاہیے کہ ہم سب ایک ہیں لیکن صرف ایک پارٹی نے ایسا نہیں ہونے دیا ۔انہوں نے کہا کہ ترکی کے صدر طیب اردوان کا حالیہ دورہ پاکستان بہت اہمیت کا حامل ہے ۔گزشتہ روز صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) میٹرو پولیٹن راولپنڈی کے جنرل سیکریٹری حاجی پرویز خان نے کہا کہ ترکی کے صدر طیب اردوان کا دورہ پاکستان دیرینہ تعلقات کو مزید مستحکم کرنے میں معاون ثابت ہوگا ‘جس طرح چین پاکستان کے ساتھ کھڑا ہے اسی طرح ترکی بھی پاکستان کے ساتھ کھڑا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ترکی پاکستان میں تعمیر و ترقی کے میگا پراجیکٹس میں دلچسپی سے حصہ لے رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ سیاحت کے فروغ کے لئے ترکی کے ساتھ اعلی سطحی وفود کا تبادلہ ہونا چاہیے تا کہ دونوں ممالک کے عوام ایک دوسرے ملک کی سیاحت کو قریب سے دیکھ سکے ۔انہوں نے کہا کہ ترکی کے ساتھ پاکستان کی پائیدار دوستی ہے ‘اس دوستی کو ہر فورم پر اجاگر ہونا چاہیے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر