جہازوں کے عجائب گھر میں فحش فلموں کی اداکاراﺅں کی شرمناک حرکتوں نے ہنگامہ برپا کردیا

جہازوں کے عجائب گھر میں فحش فلموں کی اداکاراﺅں کی شرمناک حرکتوں نے ہنگامہ ...
جہازوں کے عجائب گھر میں فحش فلموں کی اداکاراﺅں کی شرمناک حرکتوں نے ہنگامہ برپا کردیا

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ کے شہر کنوینٹری میں ’مڈلینڈ ایئرمیوزیم‘ نامی ہوائی جہازوں کا ایک عجائب گھر ہے جس میں گزشتہ دنوں فحش فلموں کی اداکاراﺅں نے ایسی شرمناک حرکات کر ڈالیں کہ ہنگامہ برپا ہو گیا۔ ڈیلی سٹار کے مطابق فحش فلمیں بنانے والے ایک سٹوڈیو نے 100پاﺅنڈ میں اس عجائب گھر میں ایک طیارہ ہائر کیا اور پھر متعدد اداکاروں اور اداکاراﺅں کو وہاں لا کر طیارے کے اندر اور باہر فحش فلم کی شوٹنگ کر ڈالی۔

سٹوڈیو کی طرف سے شوٹنگ کے اگلے روز اپنے آفیشل انسٹاگرام اکاﺅنٹ پر اس شوٹنگ کی کچھ تصاویر پوسٹ کی گئیں جس پر ہلچل مچ گئی۔ ان لوگوں نے جس جہاز میں یہ فلم شوٹ کی وہ 1950ءمیں بنایا جائے والا ایک ایئرکرافٹ تھا جو ایک وقت میں ایئرفرانس کے فضائی بیڑے کا حصہ تھا۔ منظرعام پر آنے والی تصاویر سے پتا چلتا ہے کہ اس شوٹنگ میں کرسٹینا مے، ایملی بلیک اور بیتھنی ایڈمز نامی اداکاراﺅں نے حصہ لیا۔ فلم میں ان اداکاراﺅں نے فضائی عملے کا روپ دھار رکھا ہوتا ہے۔ اس واقعے پر میوزیم کے منیجر ڈیانی جیمز کا کہنا تھا کہ ”یہ لوگ پائلٹس اور ایئرہوسٹسز کی یونیفارمز پہن کر آئے تھے۔ ہمارے لیے یہ کوئی نئی بات نہیں تھی کیونکہ گاہے لوگ یہاں ایسی یونیفارمز پہن کر آتے ہیں۔ یہی وجہ تھی کہ ہمیں شک نہیں ہوا اور یہ لوگ شوٹنگ کرکے چلے گئے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس