نامور شاعر،نقاد شبلی نعمانی کا یومِ وفات(18نومبر)

نامور شاعر،نقاد شبلی نعمانی کا یومِ وفات(18نومبر)
نامور شاعر،نقاد شبلی نعمانی کا یومِ وفات(18نومبر)

  

شبلی نعمانی:

علامہ شبلی نعمانی3جون 1857ءکو اعظم گڑھ میں پید ہوئے۔ ان کا شمار اردو تنقید کے بنیاد نگاروں میں ہوتا ہے۔ وہ اردو زبان و ادب میں بطور شاعر، مورخ، سوانح نگار، نقاد اور سیرت نگار کے انتہائی اہمیت کے حامل ہیں۔ ان کا انتقال 18نومبر1914ءکو لکھنو میں ہوا۔

نمونۂ کلام

ناتواں عشق نے آخر کیا ایسا ہم کو 

غم اٹھانے کا بھی باقی نہیں یارا ہم کو 

درد ِفرقت سے ترے ضعف ہے ایسا ہم کو 

خواب میں بھی ترے دشوار ہے آنا ہم کو 

  رہبری کی دہنِ یار کی جانب خط نے 

خضر نے چشمۂ حیوان یہ دکھایا ہم کو 

دل گرا اس کے زنخداں میں فریبِ خط سے 

چاہِ خس پوش تھا اے وائے نہ سوجھا ہم کو 

قالب جسم میں جاں آ گئی گویا شبلیؔ 

معجزۂ فکر نے اپنی یہ دکھایا ہم کو 

شاعر: شبلی نعمانی

Natawaan   Eshq   Nay   Kiya   Aisa   Ham   Ko

Gham   Uthaanay   Ka   Bhi   Baaqi  Nahen   Yaara   Ham   Ko

 Dard-e-Furqat   Sat   Tiray   Zof    Hay   Aisa   Ham   Ko

Khaab   Men   Bhi  Tiray   Dushwaar   Hay   Aana   Ham   Ko

 Rehbari   Ki   Dahan -e-Yaar   Ki   Jaanib   Khat   Nay

Khizr   Nay   Chashma-e-Haiwaan   Yeh   Dikhaaya   Ham   Ko

 Dil   Agar   Uss   K   Zankhandaan   Men   Faraib-e-Khat   Nay

Chaah-e-Khas   Posh   Tha   Ay   Waaey   Na   Soojha   Ham   Ko

 Qaalib-e-Jism   Men   Jaan   Aa   Gai   Goya   SHIBLI

Mojaza-e-Fikr   Nay   Apni   Yeh   Dikhaaya   Ham   Ko

 Poet: Shibli   Naomani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -