پاک افغان تعلقات صرف سفارت کاری سے صحیح نہیں ہوسکتے،آفتاب شیر پاؤ

پاک افغان تعلقات صرف سفارت کاری سے صحیح نہیں ہوسکتے،آفتاب شیر پاؤ

پشاور(آئی این پی ) قومی وطن پارٹی کے مرکزی چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپاؤ نے کہا ہے کہ دہشت گردی کی وجہ سے پختون خطہ مکمل طور پر متاثر ہوچکا ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ حکومت اس مسئلے کو جڑ سے ختم کر نے کیلئے ٹھوس اور درست اقدامات اٹھا ئے ا ن خیالات کا اظہار انہوں نے سرحدگارڈن پشاور میں منعقدہ قومی وطن پارٹی کے تیسرے یوم تاسیس کے موقع پر کیا۔آفتاب شیرپاؤ نے کہا کہ پختون قوم تاریخ کے نازک دور سے گزر رہی ہے۔ پاکستان اور افغانستان کے درمیان تعلقات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ افغانستان میں جو کچھ بھی ہوتا ہے اس کا براہ راست اثر پاکستان میں رہنے وا لے پختونوں پر بھی ہوتا ہے اور افغانستان میں جاری بدامنی ہمارے مفاد میں نہیں ہے لہٰذا ہمیں وہاں کی بد امنی کو ختم کر نے اور امن کے قیام کیلئے حتی الوسع کوشش کر نی چاہئے۔انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان اور پاکستان کے تعلقات صرف ریاستی سطح پر سفارت کاری سے حل نہیں ہوسکتے ہیں بلکہ اس مقصدکے حصول کیلئے پشاور، جلال آباد، قندہار اور کوئٹہ کے پختونوں کو شامل کرنا ہوگا کیونکہ دونوں طرف کے پختونوں کا ایک دوسرے کے ساتھ صدیوں پرانے تعلقات ہیں جو دونوں ممالک کے درمیان دوستی کی فضا قائم کر نے میں مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فاٹا کو صوبہ خیبر پختونخوا میں ضم کر نے سے دہشت گردی سے متاثرہ قبائلیوں کی زندگی پر اچھے اثرات مرتب ہونگے اور علاقہ ترقی اور خوشحالی کی راہ پر گامزن ہوجائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اگر فاٹا کو صوبہ خیبر پختونخوا میں ضم کیا گیا تو یہ وفاق کو مضبوط کر نے کیلئے پہلا قدم ہوگا۔کالا باغ ڈیم کے مسئلے پر بات کرتے ہوئے آفتاب شیرپاؤ نے مرکزی حکومت کو خبر دار کر تے ہوئے کہا کہ اس مسئلے کو بار بار چھیڑنے سے وفاق کمزور ہوسکتاہے حکمران جماعت کو چاہئے کہ وہ اس مسئلے پر اپنا اور قوم کا وقت ضائع نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ وفا قی حکومت کیلئے بہتر یہی ہوگا کہ کالا باغ ڈیم پر سیاست کر نا چھوڑدے اور منڈا ڈیم کی تعمیر پر اپنی توجہ مرکوز کریں۔

مزید : علاقائی