بلدیاتی ملازمین بنی گالہ کا گھیراؤ کر کے اپنا حق حاصل کرنگے ، امیر مقام

بلدیاتی ملازمین بنی گالہ کا گھیراؤ کر کے اپنا حق حاصل کرنگے ، امیر مقام

  

 صوابی(بیورورپورٹ)وزیر اعظم کے معاون خصوصی اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سینئر نائب صدر انجینئر امیر مقام نے خیبر پختونخوا حکومت سے ضلعی ، تحصیل اور یو سی سطح پر قائم ہونے والے حکومتوں کو فوری طور پر اختیارات اور ترقیاتی فنڈز منتقل کر نے کا مطالبہ کر تے ہوئے واضح کر دیا کہ اگر حکومت نے بلدیاتی الیکشن کے حوالے سے کئے گئے وعدوں کی پاسداری نہیں کی تو صوبہ بھر کے بلدیاتی ملازمین بنی گالہ کا گھیراؤ کر کے اپنے حق کا پوچھیں گے۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے ہفتہ کے روز ضلع کونسل کے رکن جہانزیب خان کے حجرہ میں ایک بڑے عوامی کھلی کچہری سے خطاب کے دوران کیا۔ جس میں عوام نے گیس ، بجلی ، ایجو کیشن ، صحت اور دیگر اداروں کے حوالے سے شکایات کے ڈھیر لگا دیئے جب کہ کھلی کچہری سے ن لیگ کے ایم پی اے حاجی محمد شیراز خان، ضلعی جنرل سیکرٹری حاجی دلدار خان ، ضلع کونسل کے رکن جہانزیب خان ، تحصیل صوابی کے جنرل سیکرٹری ربنوا ز خان ، ضلعی سیکرٹری اطلاعات محمد علی ، تحصیل لاہور کے جنرل سیکرٹری حاجی نواب زادہ، سابق امیدوار قومی اسمبلی لیاقت احمد خان،تحصیل صدر صوابی ملک عبدالا حد ، صدر اصلاحی جر گہ زیدہ عبدالسلام عرف کوکانے ، فضل عدنان خان سابق امیدوار صوبائی اسمبلی و دیگر نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر انجینئر امیر مقام نے کہا کہ لاہور کی ضمنی الیکشن میں نا کامی کے بعد اب عمران خان ملک کا وزیر اعظم بننے کا خواب چھوڑ کر صوبہ خیبر پختونخوا آکر یہاں تبدیلی لائے۔ اور بلدیاتی الیکشن میں عوام نے منتخب نمائندوں کو جو مینڈیٹ دیا ہے اس کا احترام کریں۔ کیونکہ چار ماہ گزرنے کے باوجود عمران خان کے وعدے کے مطابق بلدیاتی ناظمین کو تاحال صوبائی حکومت نے اختیارات منتقل نہ کر کے عمران کے وعدے کی نفی کی ہے۔ ان کے قول و فعل میں تضاد ہے لاہور اور اوکاڑہ کے ضمنی الیکشن سے ثابت ہو گیا کہ لاہور میں ضمنی الیکشن میں ناکام کے علاوہ اوکاڑہ میں پی ٹی آئی کے امیدوار کا ضمانت بھی ضبط ہو چکا ہے اب عمران خان اس ملک کا وزیر اعظم نہیں بن سکتا ہے اسی طرح ہری پور کے ضمنی الیکشن میں بھی چالیس ہزار ووٹوں سے پی ٹی آئی کا امیدوار شکست کھا چکا ہے۔ پنجاب عمران خان کے ہاتھ سے نکل چکا ہے اور خیبر پختونخوا بھی آنے والے الیکشن میں ان کے ہاتھ سے نکل جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ لاہور کے ضمنی الیکشن کے بارے میں ہمارا گما ن بھی نہیں تھا کہ یہ سیٹ ہم جیتیں گے کیونکہ اس الیکشن میں علیم خان کی کامیابی کے لئے عمران خان اور ان کی بیوی بھابھی ریحام گھر گھر مہم چلا ئی تھی۔ جب کہ پی ٹی آئی کے امیدوار نے پانچ ارب روپے سے زیادہ انتخابی مہم پر خرچ کئے تھے اسی طرح جماعت اسلامی ، ڈاکٹر طاہر قادری اور چوہدری صاحبان کی ق لیگ سمیت تمام اپوزیشن جماعتیں پی ٹی آئی کے ساتھ شامل تھیں۔عمران خان نے قومی وطن پارٹی کی قائدین کو چور قرار دے رہے تھے۔ اب وہ سب الزامات بھول کر ان کو اقتدار میں لا رہے ہیں ان کی کرپشن اور چوری کہاں گئی کیونکہ دونوں آج آپس میں مل بیٹھ گئے ہیں انہوں نے کہا کہ بلدیاتی اداروں کی مضبوطی کے دعویدار عمران خان اور صوبائی حکومت الیکشن کرانے کے بعد اب اختیارات دینا نہیں چاہتی آئے روز بلدیاتی ایکٹ میں ترامیم کر تے ہیں حالانکہ پی ٹی آئی والوں کو عوامی مینڈیٹ کا احترام کرنا چاہئے تھا۔انہوں نے ضلع صوابی کے مختلف علاقوں میں دس کلو میٹر گیس پائپ لائن بچھانے ،چھ صوبائی حلقوں میں ہر حلقے حلقے میں تین تین نئے یوٹیلیٹی سٹور کھولنے ، صوابی اور طوطالئی خدوخیل میں پچاس نئے بجلی کے ٹرانسفارمر فراہم کر نے ،تورڈھیر چھوٹا لاہور میں نئے فیڈر قائم کر نے، تر بیلہ ڈیم مین لائن جلد مکمل کر نے ، مرغز اور کرنل شیر کلے رزڑ میں نادرا آپس کے قیام ،بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے مزید دو دفاتر قائم کر نے ، صوابی میں جلد از جلد پاسپورٹ آفس قائم کر نے کا اعلان کر تے ہوئے واضح کیا کہ گذشتہ روز شاہ منصور میں جس ایم این اے نے سوئی گیس کا افتتاح کیا تھا یہ ایم این اے یا ایم پی اے کے فنڈ سے نہیں بلکہ وفاق اور گیس کے فنڈ سے گیس کی فراہمی کی جارہی ہے۔ اس پر کسی ایم این اے کو کریڈٹ لینے کی ضرورت نہیں ۔صوابی میں گیس اور بجلی کے حوالے سے جتنے منصوبوں پر کام ہو رہے ہیں اس کی نگرانی مسلم لیگ کے کارکن کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ وفاق سے تعلق رکھنے والے سرکاری محکموں کے آفسران لیگی کارکنوں اور عوام کے جائز مسائل بر وقت حل کریں اور اس میں کسی قسم کی کو تاہی نہیں کی جائے گی۔ انہوں نے صوابی کے چھ صوبائی حلقوں میں ہر حلقے میں پارٹی کے دو دو رکنی کمیٹی کی تشکیل کا اعلان کیا اور کہا کہ کمیٹیوں کے ارکان اپنے اپنے حلقوں میں عوام کے مسائل سرکاری محکموں سے حل کراینگے۔ اور اس میں سرکاری آفسران کی جانب سے روڑے اٹکانے ہر گز بر داشت نہیں کرینگے۔ این ٹی ایس کے تحت میرٹ پر تقرریاں ہو رہی ہے لیکن اس کے بغیر جہاں خالی پوسٹیں ہوں وہاں مقامی لوگوں کو روزگار فراہم کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے حکومت نے عمران خان کے ہر مطالبے کو عملی جامہ پہنایا ہے۔ اس لئے لاہور اور اوکاڑہ میں ضلعی الیکشن فوج کی نگرانی میں ہوئے۔ اب دھاندلی والی بات ختم ہو چکی ہے سب کچھ عمران کی مرضی سے ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میری خواہش ہے صوبہ کے ہر ضلع جا کر کھلی کچہری کا انعقا د کر کے موقع پر عوام کے مسائل حل کر سکوں۔ ماضی میں حکومتی لوگ کارکنوں اور سرکاری آفسران پر چڑھائی کر تے تھے لیکن مسلم لیگ کے ورکروں کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ وہ نہایت شریف اور عزت دار لوگ ہیں۔ اس لئے سرکاری آفسران سے میری درخواست ہے کہ وہ ان کارکنوں کی قدر و عزت کریں اور ان کے جائز مسائل بروقت حل کیا کریں۔ انہوں نے کہا کہ میں دو سال واپڈا کا منسٹر رہا ہوں اور کوئی بھی آفسر ایک پیسہ کرپشن مجھ پر ثابت نہیں کر سکے گا۔ میں نے اپنی سیاسی زندگی میں جتنے کام کئے ہیں وہ سب عوام کے مفاد میں کئے ہیں۔ ہماری سیاست کا مقصد عوام کی بے لوث خدمت اور ان کے در پیش مسائل کا ازالہ ہے۔ میں نے سات بار موت کو دیکھا لیکن پھر بھی عوامی مسائل کے حل کے لئے کارکنوں اور عوام کے پاس جا رہا ہوں۔ صوابی میرا دوسرا گھر ہے اور جس کو بھی دوستی کا ہاتھ دیتا ہے وہ کٹ سکتا ہے مگر ہٹ نہیں سکتا صوابی والوں کی محبت کبھی نہیں بھول سکتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کھلی کچہری میں جو اعلانات کئے یہ صرف زبانی جمع خرچ نہیں بلکہ ان اعلانات پر پوری کارروائی کر کے اس کو عملی جامہ

مزید :

پشاورصفحہ اول -