نایاب پرندوں کے غیر قانونی شکار کیخلاف درخواست پر حکومت،محکمہ جنگلی حیات کو نوٹس

نایاب پرندوں کے غیر قانونی شکار کیخلاف درخواست پر حکومت،محکمہ جنگلی حیات کو ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے تلور،تیتر ،کونج اور دیگرنایاب پرندوں کے غیر قانونی شکار کے خلاف دائر درخواست پر وفاقی حکومت،محکمہ جنگلی حیات اور دیگر فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے رپورٹ طلب کر لی ہے۔چیف جسٹس سید منصور علی شاہ نے کلیم الیاس ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی ،درخواست گزرا نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت تلور سمیت دیگر نایاب پرندوں کو تحفظ فراہم کیا گیا ہے اور قانون ایسے پرندوں کے شکار کی اجازت نہیں دیتا جن کو تحفظ فراہم کیا گیا ہو، حکومت نے قانون کی نفی کرتے ہوئے قطر کے شاہی خاندان کے افراد کو کو شکار کی کھیلنے کی اجازت دی جس سے تلور کی نسل معدوم ہونے کا خدشہ ہے،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے محکمہ وائلڈ لائف پنجاب کا جواب داخل کراتے ہوئے کہا کہ شکار کرنے سے تلور نسل کی بقاء کو کوئی خطرہ نہیں جس پرعدالت نے ریمارکس دیئے کہ حکومت پنجاب اور عالمی ادارے کی رپورٹ میں تضاد ہے،سپریم کورٹ بھی تلور نسل کی بقاء کے حوالے سے اپنی آبزرویشن دے چکی ہے،عدالت جائزہ لے گی کہ تلور نسل کی بقاء کو خطرات لاحق ہیں یا نہیں،عدالت نے وفاقی حکومت،محکمہ تحفظ جنگلی حیات اور برڈ لائف انٹرنیشنل سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت ملتو ی کر دی۔

مزید : علاقائی


loading...