نوکری کیلئے انٹرویو دیتے وقت وہ سوال جن کے جواب میں ہمیشہ جھوٹ بولنا چاہیے

نوکری کیلئے انٹرویو دیتے وقت وہ سوال جن کے جواب میں ہمیشہ جھوٹ بولنا چاہیے
نوکری کیلئے انٹرویو دیتے وقت وہ سوال جن کے جواب میں ہمیشہ جھوٹ بولنا چاہیے

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) نوکری کے انٹرویو میں کچھ ایسے سوالات پوچھے جاتے ہیں کہ جن کے جواب میں سچ بولنا آپ کو ناکام کرا سکتا ہے۔ ایسے میں امیدواروں کو کیا کرنا چاہیے؟ اس سوال کا جواب معروف برطانوی جاب کنسلٹنٹ میریلین سپیسر نے دے دیا ہے۔

میل آن لائن کے مطابق میریلین کا کہنا تھا کہ جب آپ سے سوال پوچھا جائے کہ آپ نئی نوکری کی تلاش میں کیوں ہیں؟ تو اس کے جواب میں یہ بتایا کہ آپ پرانی نوکری سے تنگ آ چکے ہو، یا دیگر مسائل پر بات کرنا خطرناک ہو سکتا ہے۔ ایسے میں آپ کو چاہیے کہ آپ اس سوال کے جواب میں پچھلی نوکری کی برائیاں بیان کرنے کی بجائے اس نوکری کی اچھائیاں بیان کریں جس کے لیے آپ انٹرویو دے رہے ہیں۔ آپ بتائیں کہ اس نئی نوکری سے آپ کو کیا توقعات ہیں اور آپ اس نئے کردار سے کیا حاصل کرنا چاہتے ہیں۔

میریلین کا کہنا تھا کہ انٹرویو کے دوران پوچھے جانے والے مشکل ترین سوالوں میں ایک یہ ہوتا ہے کہ ’آپ کی موجودہ تنخواہ کتنی ہے؟‘ اس سوال کے جواب میں غلط بیانی کی بجائے آپ درست جواب دیں اور تنخواہ بتانے کے ساتھ اگلی جاب سے وابستہ توقعات کی بات بھی کریں۔ آج اس طرح جواب دیں کہ میری موجودہ جاب میں اتنے گھنٹے کے مجھے اتنے پیسے مل رہے ہیں لیکن اس نئی جاب میں میرا کام کئی پہلوﺅں سے بہتر اور زیادہ ہو گا۔ یہ میرے کیریئر میں ایک اگلا زینہ ہے چنانچہ امید ہے کہ مجھے تنخواہ بھی میرے اس نئے کام کے مطابق ملے گی۔

میریلین کے مطابق ایک مشکل سوال یہ ہوتا ہے کہ ’آپ کی کمزوریاں کیا کیا ہیں؟‘ اس سوال کے جواب میں اپنی طاقت کو کمزوریوں کے ماسک میں چھپانے کی بجائے آپ بتائیں کہ آپ کن حوالوں سے خود کو بہتر بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ان حوالوں میں آپ ٹائم مینجمنٹ یا ادارہ جاتی مہارت وغیرہ کی بات کر سکتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس