سانحہ کار ساز‘ چھپے کرداروں کو بے نقاب کیا جائے‘ حبیب اللہ شاکر 

  سانحہ کار ساز‘ چھپے کرداروں کو بے نقاب کیا جائے‘ حبیب اللہ شاکر 

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر)سابق جسٹس لا ہور ہائیکورٹ و پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما حبیب اللّٰہ شاکر نے کہا ہے کہ سانحہ کارساز اور بے نظیر بھٹو کو شہید کرنے کی رپورٹ منظر عام پر (بقیہ نمبر27صفحہ 6پر)

نہیں آئی ملک میں قا نو ن اور آ ئین کی با لا دستی ہو نی چا ہیے،قائد اعظم اور قائد ملت کو قتل کیا گیا اسکی رپورٹ آج تک منظر عام تک نہیں آئی، عوام قربانیاں دے رہی ہے حکمران سوئے ہوئے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈسٹرکٹ بار میں سانحہ کار ساز، پرویز مشرف کے لگائے گئے مارشل لاء کے خلاف اور لیاقت علی خان کے قتل کے حوالے سے منعقدہ اجلاس سے گفتگو کرتے ہوئے کیا  کہ ہما را کام د یا جلا نا ہے بھٹو ایک نظر یہ کا نا م ہے بھٹو ا یک قوم کا نام ہے پا کستان کی تا ر یخ شہید و ں سے بھر ی پڑ ی ہے ہما ری عوام ہر قسم کی قر با نی د ینے کے لئے تیار ہے بے نظیر بھٹو شہید کے قا تلو ں کو آج تک گر فتار نہیں کیا جا سکا کسی ملزم کو کہٹر ے میں لا یا گیا آ ج تک کسی انکوائر ی کی رپورٹ نہیں آ ئی ۔ ان کا کہنا تھا کہ یہاں لوگوں میں سچ بولنے کی ہمت نہیں ہے، جو لو گ عوام کی با ت کر تے ہیں ان کو شہید کر د یا جا تا ہے  ہم سچ بو لنے سے گر یز کر تے ہیں سچی بات کہنے نہیں د یتے میر ی آواز بند کر دی جا ئے گی  عوام کے دو ستو ں کو ما رنے وا لے بڑ ے طا قتور ہیں بے نظیر بھٹو کو شہید کرنے کے فوری بعد وہاں سے شواہد کو مٹا دیا گیا جس کا وا رث چلا جا ئے  اس کو پتا چلتا ہے کہ موت کیا ہو تی ہے محتر مہ کے قا تل آج تک گر فتا ر نہیں کیے جا سکے، 152۔شہید اور۔ 552۔کا ر کنو ں کو ز خمی کر کے شہید بی بی کو پیغام د یا گیا تھا۔ پتہ نہیں اندر سے کون کون ملا ہو تا ہے اکتو بر کے مہینے میں حکیم سعید احمد کوقتل کیا گیا 27 اور آج ان کے قا تلو ں کو انگلینڈ میں بھی جگہ نہیں مل ر ہی اکتو بر کو جمہوری حکو مت کا خا تمہ کر کے ایک ڈکٹیٹر پرویز مشرف نے جمہوریت پر شب خون مارا،چھپے کرداروں کو منظر عام تک لانے کے لئے سانحہ کارساز کی رپورٹ سامنے لانا ضروری ہے، وکلاء تقریب میں سینئر قانون دان عظیم الحق پیر زادہ، اطہر شاہ بخاری، ریاض الحسن گیلانی ، جعفر طیار بخاری  عا صم پر و یز،زوار حسین قر یشی،اشتیا ق حسین شاہ  اکرم بھٹی، راؤ سلطان محمود، عارف شاہ، اکرم بھٹی، صفدر سرسانہ، نشید عارف گوندل سمیت وکلاء کی کثیر تعداد موجود تھی۔

حبیب اللہ شاکر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -