میری چاہت کی بہت لمبی سزا دو مجھ کو | نکہت افتخار |

میری چاہت کی بہت لمبی سزا دو مجھ کو | نکہت افتخار |

  

میری چاہت کی بہت لمبی سزا دو مجھ کو

کربِ تنہائی میں جینے کی دعا دو مجھ کو

فن تمہارا تو کسی اور سے منسوب ہوا

کوئی میری ہی غزل آ     کر سنا دو مجھ کو

حال بے حال ہے تاریک ہے مستقبل بھی

بن پڑے تم سے تو ماضی مرا لا دو مجھ کو

آخری شمع ہوں میں بزمِ وفا کی لوگو

چاہے جلنے دو مجھے چاہے بجھا دو مجھ کو

خود کو رکھ کے میں کہیں بھول  گئی ہوں شاید

تم مری ذات سے ایک بار ملا دو مجھ کو

شاعرہ: نکہت افتخار

Meri   Chaahat   Ki   Bahut    Lambi   Saza   Do   Mujhay

Karb-e-Tanhaai   Men   Jeenay   Ki   Dua   Do   Mujhay

 Fan   Tumhaara   To   Kisi   Aor   Say   Mansoob   Hua

Koi   Meri   Hi   GHazal   Aa   Kar   Suna   Do   Mujhay

 Haal   Be   Haal   Hay   Tareek   Hay   Mustaqbill   Bhi

Ban   Parray   Tum   Say   To   Maazi   Mira   Laa   Do   Mujhay

 Aaakhri   Shama    Hun   Main   Bazm-e-Wafaa   Ki   Logo

Chaahay    Jalnay   Do   Mujhay   Chaahay   Bujhaa   Do   Mujhay

 Khud   Ko   Rakh    K   Main   Kahen   Bhool   Gai   Hun   Shayad

Tum  Miri   Zaat   Say    Ik   Baar   Milaa   Do   Mujhay

 Poetess: Nikhat   Iftikhar 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -