ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صورت| واصف علی واصف |

ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صورت| واصف علی واصف |
ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صورت| واصف علی واصف |

  

ہر چہرے میں آتی ہے نظر یار کی صورت

احباب کی صورت ہو کہ اغیار کی صورت

سینے میں اگر سوز سلامت ہو تو خود ہی

اشعار میں ڈھل جاتی ہے افکار کی صورت

جس آنکھ نے دیکھا تجھے اس آنکھ کو دیکھوں

ہے اس کے سوا کیا ترے دیدار کی صورت

پہچان لیا تجھ کو تری شیشہ گری سے

آتی ہے نظر فن ہی سے فنکار کی صورت

اشکوں نے بیاں کر ہی دیا رازِتمنا

ہم سوچ رہے تھے ابھی اظہار کی صورت

اس خاک میں پوشیدہ ہیں ہر رنگ کے خاکے

مٹی سے نکلتے ہیں جو گلزار کی صورت

صورت مری آنکھوں میں سمائے گی نہ کوئی

نظروں میں بسی رہتی ہے سرکار کی صورت 

واصف کو سرِدار پکارا ہے کسی نے

انکار کی صورت ہے نہ اقرار کی صورت

شاعر: واصف علی واصف

Har   Chehray   Men   Aati   Hay   Nazar   Yaar   Ki   Soorat

Ahbaab   Ki   Soorat   Ho   Keh   Aghyaar   Ki   Soorat

 Seenay   Men   Agar   Soz   Salaamat   Ho   To   Khud   Hi

Ashaar   Men   Dhall   Jaati   Hay   Afkaar   Ki   Soorat

 Jiss   Annkh   Nay   Daikha   Tujhay   Iss   Aankh   Ko  Daikhun

Hay   Iss   K   Siwaa   Kaya   Tiray   Dedaar   Ki   Soorat

 Pehchaan   Liya   Tujh   Ko   Tiri   Sheesha   Gari   Say

Aati   Hay   Nazar   Fan   Hi   Say   Fankaar    Ki   Soorat

 Ashkon   Nay   Bayaan   Kar   Hi   Diya   Raaz-e-Tamanna

Ham   Soch   Rahay   Thay   Abhi   Izhaar   Ki   Soorat

 Iss   Khaak   Men   Paosheeda   Hen   Har    Rang  K   Khaakay

Matti     Say   Nikaltay   Hen   Gulzaar   Ki   Soorat

 Soorat    Miri    Aankhon   Men   Samaaey   Gi   Na   Koi

Nazron   Men   Basi   Rehti    Hay   Sarkaar   Ki   Soorat

 WASIF   Jo   Sardaar   Pukaara   Hay   Kisi   Nay

Inkaar   Ki   Soorat   Hay   Na   Iqraar   Ki   Soorat

 Poet: Wasif   Ali   Wasif

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -