چاندنی رات میں کھلے چہرے | واصف علی واصف |

چاندنی رات میں کھلے چہرے | واصف علی واصف |
چاندنی رات میں کھلے چہرے | واصف علی واصف |

  

چاندنی رات میں کھلے چہرے 

صبح ہوتے ہی چھپ گئے چہرے 

میں نگاہوں کو کس طرح بدلوں 

آپ نے تو بدل لیے چہرے 

غور سے دیکھ آبگینوں کو 

کل کہاں ہوں گے آج کے چہرے 

کھا رہے ہیں درخت کا سایہ 

ٹہنیوں سے لگے ہوئے چہرے 

اس کا چہرہ کب اس کا اپنا تھا 

جس کے چہرے پر مر مٹے چہرے 

زندگی میں کبھی نہیں ملتے 

کاغذوں پر سجے ہوئے چہرے 

آ گئے کھل کے سامنے واصفؔ 

آستیں میں چھپے ہوئے چہرے 

شاعر: واصف علی واصف

Chaandni   Raat   Men   Khilay   Chehray

Sunbh   Hoaty   Hi   Chhup   Gaeay   Chehray

 Main   Nigaahon   Ko   Kiss   Tarah   Badlun

Aap   Nay   To   Badal   Liay   Chehray

 Ghaor   Say   Daikh   Aabgeenon   Ko

Kall  Kahan   Hon   Gay   Aaj   K    Chehray

 Khaa    Rahay   Hen   Darakht    Ka   Chehraa

Thehniyon   Say   Lagay   Huay   Chehray

Uss   Ka   Chehraa   Kab    Uss   Ka   Apna   Tha

Jiss   K   Chehray   Pe   Mar   Mittay   Chehray

 Zindagi   Men   Kabhi   Nahen   Miltay

Kaaghzon   Par   Sajay   Huay   Chehray

 Aa    Gaey    Khull    Ka   Saamnay   WASIF 

Aasteen   Men   Chhupay   Huay   Chehray

 Poet: Wasif   Ali  Wasif

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -