دلِ حزیں سے بہاروں کی بات رہنے دو| وامق جونپوری |

دلِ حزیں سے بہاروں کی بات رہنے دو| وامق جونپوری |
دلِ حزیں سے بہاروں کی بات رہنے دو| وامق جونپوری |

  

دلِ حزیں سے بہاروں کی بات رہنے دو

ہو تشنگی تو نظاروں کی بات رہنے دو

تمہارے سر میں اگر نشۂ جنوں نہیں

تو سر بمہر سہاروں کی بات رہنے دو

ہٹاؤ بلبل و گل پتیوں پہ شعر لکھو

کروڑوں ہوں تو ہزاروں کی بات رہنے دو

صلیب مانگے کی مقتل میں لائے ہو وامق

ادب کی جا ہے اُدھاروں کی بات رہنے دو

شاعر: وامق جونپوری

(شعری مجموعہ:سفرِ ناتمام؛سالِ اشاعت،1990 )

Dil-e-Hazeen   Say   Bahaaron   Ki   Baat   Rehnay   Do

Ho    Tashnagi   To   Nazaaron   Ki   Baat   Rehnay   Do

 Tumhaaray   Sar    Men   Agar   Nashaa-e-Junoon   Nahen

To   Sar  Ba   Moher    Sahaaron   Ki   Baat   Rehnay   Do

Hataao   Bulbul -o-Gull    Patiyon   Pe   Shaer   Likho

Karorron   Hon   To   Hazaaron   Ki   Baat   Rehnay   Do

 Saleeb   Maangay   Ki   Maqtal   Men   Laaey   Ho   WAMIQ

Adab    Ki   Jaa   Hay   Udhaaron   Ki   Baat   Rehnay   Do

Poet: Wamiq   Jaunpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -