شیشہ اس کا عجیب ہے خود ہی | وامق جونپوری |

شیشہ اس کا عجیب ہے خود ہی | وامق جونپوری |
شیشہ اس کا عجیب ہے خود ہی | وامق جونپوری |

  

شیشہ اس کا عجیب ہے خود ہی 

وہ ہمارا رقیب ہے خود ہی 

جان کر ہم نہیں لگاتے دل 

دل سے ہر بت قریب ہے خود ہی 

ہم کو حاجت نہیں نقیبوں کی 

شعر اپنا نقیب ہے خود ہی 

کوئی ہم کو صلیب کیا دے گا 

فن ہمارا صلیب ہے خود ہی 

ملک کو مالِ وقف مت جانو 

قوم اپنی غریب ہے خود ہی 

تم سکھاؤگے وامقؔ اس کو ادب 

ہر پری وش ادیب ہے خود ہی 

شاعر: وامق جونپوری

(شعری مجموعہ:سفرِ ناتمام؛سالِ اشاعت،1990 )

Sheesha   Iss   Ka   Ajeeb   Hay   Khud   Hi

Wo   Hamaara   Raqeeb   Hay   Khud   Hi

 Jaan   Kar   Ham   Nahen   Lagaatay   Dil

Dil   Say   Har   Butt   Qareeb   Hay   Khud   Hi

Ham   Ko   Haajat   Nahen   Naqeebon   Ki

Shair   Apna   Naqeeb   Hay   Khud   Hi

 Koi   Ham   Ko   Saleeb   Kaya    Day   Ga

Fan   Hamaara   Saleeb   Hay   Khud   Hi

 Mulk   Ko   Maal -e-Waqf    Mat   Jaano

Qaom   Apni   Ghareeb   Hay   Khud   Hi

 Tum    Sikhaao   Gay   WAMIQ   Iss    Ko   Adab

Har   Pari   Vish   Adeeb   Hay   Khud   Hi

 Poet: Wamiq   Jaunpuri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -