سنبھل کر ،فیصلے کی یہ گھڑی ہے| وجیہ ثانی |

سنبھل کر ،فیصلے کی یہ گھڑی ہے| وجیہ ثانی |
سنبھل کر ،فیصلے کی یہ گھڑی ہے| وجیہ ثانی |

  

سنبھل کر ،فیصلے کی یہ گھڑی ہے

اور اُس پہ شرط بھی کتنی کڑی ہے

میں اُس کو چھوڑ کر جانے لگا ہوں

محبت راستہ روکے کھڑی ہے

مری آغوش میں سوئی ہے جو اب

صبح سے شام تک مجھ سےلڑی ہے

ڈٹا ہوں جب سے اپنی بات پر میں

وہ اپنی شرط پہ تب سے اڑی ہے

ہے ہرسو وحشتوں کا شور ثانی

مگر لہجے میں ویرانی گڑی ہے

شاعر:وجیہ ثانی

(وجیہ ثانی کی وال سے)

Sanbhall   Kar   ,   Faislay   Ki   Yeh   Gharri   Hay

Or   Uss   Pe   Shart   Bhi   Kitni   Karri   Hay

 Main    Uss   Ko   Chhorr   Kar   Jaanay   Lagaa   Hun

Muhabbat   Raasta   Rokay   Kharri   Hay

 Miri   Aaghosh   Men   Soi   Hay   Jo   Ab

Subh   Say   Shaam   Tak   Mujh   Say   Larri   Hay

 Dataa   Hun   Jab   Say   Apni   Baat   Par   Main

Wo   Apni   Shart   Pe   Tab   Say  Arri   Hay

Hay   Har   Soo   Wehshaton   Ka   Shor   SANI

Magar   Lehjay   Men   Veeraani   Garri   Hay

Poet: Wajeeh  Sani 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -