پہلوئے یار سے لگے ہوئے ہیں| وجیہ ثانی |

پہلوئے یار سے لگے ہوئے ہیں| وجیہ ثانی |
پہلوئے یار سے لگے ہوئے ہیں| وجیہ ثانی |

  

پہلوئے یار سے لگے ہوئے ہیں

پھول بھی خار سے لگے ہوئے ہیں

میرے دشمن مرے تعاقب میں

پوری رفتار سے لگے ہوئے ہیں

آؤ ملواؤں اپنے دوستوں سے

یہ جو اشجار سے لگے ہوئے ہیں

تو مذمت سے باز آیا، ترے

کچھ طرفدار سے لگے ہوئے 

تیرے پیمان دل کے کونے میں

یاد کی تار سے لگے ہوئے ہیں

روح پر زخم کیسے لگتے ہیں ?

پیار کی مار سے لگے ہوئے ہیں

  شاعر:وجیہ ثانی

(وجیہ ثانی کی وال سے)

Pehlu-e-Yaar   Say   Lagay   Huay   Hen

Phoool   Bhi   Khaaar   Say   Lagay   Huay   Hen

 Meray   Dushman   Miray   Ta'aaqub   Men

Poori   Raftaar   Say   Lagay   Huay   Hen

 Aao   Milwaaon   Apnay   Doston   Say

Yeh   Jo   Ashjaar   Say   Lagay   Huay   Hen

 Tu   Muzammat   Say   Baaz   Aaya   ,  Tiray

Kuchh   Tarafdaar   Say   Lagay   Huay   Hen

 

 Tearay    Paimaan-e-Dil    K   Konay   Men

Yaad   Ki   Taar   Say   Lagay   Huay   Hen

 Rooh   Par   Zakhm   Kaisay   Lagtay   Hen

Payaar   Ki   Maar   Say   Lagay   Huay   Hen

Poet: Wajeeh   Sani

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -