ہیلتھ افسروں سے باز پرس،میٹنگ میں ہنگامہ،ڈی سی خانیوال،ڈاکٹرز آمنے سامنے،سخت کشیدگی الزامات

ہیلتھ افسروں سے باز پرس،میٹنگ میں ہنگامہ،ڈی سی خانیوال،ڈاکٹرز آمنے ...

  

     خانیوال (نمائندہ پاکستان) ڈپٹی کمشنر خانیوال اور ڈاکٹروں کے درمیان تنازعہ کی اندروانی کہانی سامنے آگئی، کووڈ،ڈینگی سمیت محکمہ صحت خانیوال کو دیئے گئے حکومتی اہداف کے حصول میں سست روی، ڈی سی خانیوال کی باز پشت پر ہیلتھ انتظامیہ سیخ پا،میٹنگ میں ڈاکٹرز کا ڈی سی خانیوال کی ٹیبل کا گھیراؤ، آپ کی روز روز کی میٹنگ سے ہم تنگ آچکے‘یہ کہہ کر محکمہ(بقیہ نمبر1صفحہ10پر)

 صحت کے ایک افسر نے میٹنگ کے ایجنڈے کی کاپیاں پھاڑ کر ہوا میں لہرا دیں، میٹنگ میں ڈی سی خانیوال کے ہسپتالوں اور بنیادی مراکز صحت کے دوروں پر بھی سی ای او ہیلتھ کا اعتراض،ہم نے محکمہ صحت کو کیسے چلانا ہے یہ بات آپ ہمیں مت بتائیں‘خانیوال میں کووڈ ویکسین لگانے کے کم شرح کے ڈی سی خانیوال کے سوال پر سی ای او صحت کو ڈی سی کو جواب، تفصیل کے مطابق گزشتہ روز محکمہ صحت خانیوال کو حکومت اہداف کے حصول بارے ڈی سی خانیوال کی بلائی گئی میٹنگ میں ڈاکٹر بھپر گئے ذرائع کے مطابق ڈی سی خانیوال حکومت ہدایت پر پولیو، کووڈ،ویکسین اور ڈینگی سمیت دیگر حکومت اہداف جو کہ محکمہ صحت خانیوال کو دیئے گئے ہیں ان کے حصول بارے روزانہ کی بنیاد پر ہیلتھ افسران کے ساتھ میٹنگ کرتے ہیں تاکہ رپورٹس روزانہ کی بنیاد پر حکومت کو بھجوائی جاسکیں ذرائع کے مطابق گزشتہ ایک سال میں محکمہ صحت خانیوال میں بہتری اور اہداف کے حصول کیلئے ڈی سی خانیوال کے سرکاری ہسپتالوں اور بنیادی مراکز صحت کے دوروں کی تعداد ہیلتھ افسران سے کہیں زیادہ تھی کووڈ ویکسین لگانے کی کم شرح اور ہسپتالوں میں ادویات کا سٹاک پورا ہونے کے باوجود ادویات کا ناملنے بارے اور ڈاکٹرز کے مریضوں کے ساتھ نامناسب رویے بارے ہیلتھ انتظامیہ سے بازپشت کرنا ڈی سی خانیوال کو مہنگا پڑ گیا،ناقص کارکردگی بارے سوال پر ہیلتھ افسران سیخ پا ہوگئے ایک افسر نے نازیبا الفاظ کا استعمال کرتے ہوئے میٹنگ ایجنڈے کی کاپیاں پھاڑ کر ہوا میں لہراتے ہوئے دیگر ڈاکٹرز کے ساتھ ڈی سی خانیوال کی ٹیبل کا گھیراؤ بھی کیا آپ کے سرکاری ہسپتالوں میں مسلسل اور روزانہ کی بنیاد پر کئے جانے والے دوروں پر بھی ہمارے شدید تحفظات ہیں محکمہ صحت کو کیسے چلانا ہے یہ آپ ہمیں مت سکھائیں کارکردگی بارے سوال پوچھے پر سی ای او صحت کا ڈی سی خانیوال کو جواب، دوسری طرف محکمہ صحت کے ایک اعلیٰ افسر نے نام ظاہر نہ کرنے پر بتایا کہ دو روز قبل سی ای او صحت کی کوٹھی پر اس ڈرامے بارے معاملات فائنل کرلیئے گئے تھے تاکہ ڈی سی خانیوال کی میٹنگ میں بدمزگی پیدا کرکے حالات اتنے خراب کردیئے جائیں کہ ڈی سی خانیوال کا تبادلہ ہوسکے۔محکمہ صحت خانیوال نے افسران کی ناقص کارکردگی کے باعث عوام میں شدید تشویش کی لہر پائی جاتی ہے عوامی،سماجی حلقوں نے وزیراعلیٰ پنجاب سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ محکمہ صحت خانیوال کو کرپٹ اور بدعنوان افسران سے نجات دلوائیں۔

اندرونی کہانی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -