چودھری شوگرملز کیس ،مریم نواز اور یوسف عباس کے جسمانی ریمانڈ میں مزید7 روز کی توسیع

چودھری شوگرملز کیس ،مریم نواز اور یوسف عباس کے جسمانی ریمانڈ میں مزید7 روز کی ...
چودھری شوگرملز کیس ،مریم نواز اور یوسف عباس کے جسمانی ریمانڈ میں مزید7 روز کی توسیع

  


لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)احتساب عدالت نے چودھری شوگر ملز کیس میں مریم نواز اوریوسف عباس شریف کے جسمانی ریمانڈ میں مزید7 روز کی توسیع کردی اور ملزموں کو 25 ستمبر کودوبارہ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں چودھری شوگر ملز کیس کی سماعت ہوئی،نیب نے مریم نواز اور یوسف عباس کو جج چودھری امیر محمد خان کی عدالت میں پیش کیا۔نیب وکیل نے ملزموں کے ریمانڈ میں مزید14 روز کی توسیع کردی،نیب وکیل نے کہا کہ مل میں 7 ڈائریکٹرزاور 20 پارٹنرزتھے،میاں شریف، کلثوم نواز،مریم ودیگرافراد بورڈآف ڈائریکٹرزمیں تھے،عدالت نے نیب وکیل سے استفسار کیا کہ شوگرمل کا سربراہ کون تھا؟تفتیشی نے کہا کہ مختلف وقت میں شریف فیملی کے افرادچیف ایگزیکٹومقررہوتے رہے،تفتیشی نے مزید کہا کہ شوگرمل کیلئے شریف فیملی نے مختلف جگہوں سے قرض لیا،ای ایف ایف انٹرپرائززکمپنی سے 3 کروڑقرض لیاگیا،پنجاب کارپٹس کمپنی سے ایک کروڑقرض لیاگیا،ان تمام کمپنیوں سے قرض کاریکارڈ طلب کیا گیاہے،تفتیشی افسر نے کہا کہ مریم نواز سے تمام سرمایہ کاری سے متعلق پوچھا گیا، مریم نوازاوریوسف عباس نے جواب نہیں دیا۔

مریم نواز نے نیب تفتیشی رپورٹ کومستردکردیا،مریم نواز نے کہا کہ نیب نے کرپشن سے متعلق ایک سوال بھی نہیں پوچھا،مریم نواز نے کہا کہ دادا کی زندگی میں تمام شیئرز تقسیم کر دیئے گئے ،پرویز مشرف اور پیپلز پارٹی دور میں چودھری شوگر ملز کے متعلق تفتیش ہو چکی ہے،نیب مجھ پر ایک پیسے کی بھی کرپشن ثابت نہیں کر سکا، مریم نواز نے کہا کہ نیب مجھ سے مختلف دستاویزات مانگتا ہے ، تفتیش کے پہلے مرحلے پر ہی گرفتار کر لیا تو دستاویزات کیوں مانگ رہے ہیں؟ نیب کہتا ہے 1992 میں دادا نے آپ کو جائیداد دی اس کے ثبوت فراہم کریں ، دادا نے اپنی اولاد میں ہی جائیداد دینا تھی یا محلے داروں کو دیتے ؟عدالت نے فریقین کو سننے کے بعد مریم نواز اور یوسف عباس شریف کے 7روزہ جسمانی ریمانڈ میں توسیع کردی ،عدالت نے مریم نوازاور یوسف عباس کو دوبارہ 25 ستمبر کو پیش کرنے کا حکم دیدیا۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...