دیکھنا آفت تمہارا ہو گیا | امیر خسرو|

دیکھنا آفت تمہارا ہو گیا | امیر خسرو|
دیکھنا آفت تمہارا ہو گیا | امیر خسرو|

  

دیکھنا آفت تمہارا ہو گیا

دل گیا زخمی کلیجا ہو گیا

زُلف سر کی صاف چہرا ہو گیا

روشنی پھیلی سویر ا ہو گیا

اے خدنگِ ناز کیا کہنا ترا

جس کو تاکا وہ نشانا ہو گیا

وہ چلے اٹھکھیلیوں سے باغ میں

فتنۂ محشر کا دھوکا ہو گیا

دیکھ کر صورت تری رشکِ قمر

چاند اونچا ہو کے تارا ہو گیا

عشق نے ناحق ہماری جان لی

یہ دلِ ناشاد رُسوا ہو گیا

وہ ملے مجھ کو تو سب کچھ مل گیا

قطرۂ  نا چیز دریا ہو گیا

ہنس دیے تم لعل لب کے سامنے

سب گلوں کا رنگ پھیکا ہو اگیا

آرزوئیں اتنی گھٹ گھٹ کے رہیں

دل میں خسرو درد پیدا ہو گیا

شاعر: امیر خسرو

(انتخاب کلامِ امیر خسرو(اردو کلام):مرتبہ؛مسعود انور علوی کاکوی،سالِ اشاعت،1984)

Dekhna    Aafat    Tumhaara    Ho    Gaya

Dil    Gaya    Zakhmi     Kalaija    Ho    Gaya

Zulf    Sirki    Saaf    Chehra   Ho    Gaya

Roshni    Phaili    Sawera    Ho    Gaya

Ay     Khadang-e- Naaz      Kaya     Kehna    Tira

Jiss    Ko   Taaka    Wo    Nishaana    Ho    Gaya

Wo    Chalay     Athkhailiun    Say    Baagh    Men

Fitna -e- Mehshar    Ka    Dhoka    Ho    Gaya

Dekh    Kar     Soorat    Tiri    Rashk-e -Qamar 

Chaand    Ooncha    Ho    K    Taara     Ho    Gaya

Eshq    Nay    Naahaq    Hamaari    Jaan   Li

Yeh    Dil-e -Nashaad    Ruswaa    Ho   Gaya

Wo    Milay     Mujh    Ko   To    Sab    Kuch    Mill   Gaya

Qatra -e- Nacheez    Darya  Ho    Gaya

Hans     Diay    Tum     Laal    Lab    K    Saamany 

Sab    Gulon    Ka    Rang    Pheeka     Ho   Gaya

Aarzuen    Itni    Ghutt    Ghutt    K    Rahen

Dil    Men    KHUSRAU    Dard    Paida  Ho    Gaya

Poet: Ameer    Khusrau

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -