بلائیں حسن کی لینے کو  آفتاب آیا | امیر خسرو|

بلائیں حسن کی لینے کو  آفتاب آیا | امیر خسرو|
بلائیں حسن کی لینے کو  آفتاب آیا | امیر خسرو|

  

بلائیں حسن کی لینے کو  آفتاب آیا

عجیب شان سے اُس شوخ کا شباب آیا

نگاہِ شوق کی تھیں بد حواسیاں ورنہ

ہزار بار وہ محفل میں بے حجاب آیا

ہزار رنگ میں ڈوبی ہوئی تھی بزمِ جہاں

ترا خیال بھی دل میں بہ رنگِ خواب آیا

عجیب لطف سے معمور تھی وہ خاموشی

مری زباں رُکی اور انہیں حجاب آیا

بہت بلند ہے موت و حیات سے خسرو

جو بارگاہِ محبت میں کامیاب آیا

شاعر: امیر خسرو

(انتخاب کلامِ امیر خسرو(اردو کلام):مرتبہ؛مسعود انور علوی کاکوی،سالِ اشاعت،1984)

Balaaen    Husn    Ki    Lenay    Ko    Aaftaab     Aaya

Ajeeb    Shaan     Say    Uss   Shokh    K   Shabaab     Aaya

Nigaah-e- Shokh   Ki    Then   Badhawaasiaan   Warna

Hazaar   Baar    Wo    Mehfil    Men   Be  Hijaab      Aaya

Hazaar    Rang    Men   Doobi    Hui    Thi    Bazm-e- Jahaan

Tira    Khayaal    Bhi    Dil    Men     Ba Rang -e- Khaab     Aaya

Ajeeb    Lutf    Say    Mamoor     Thi    Wo    Khaamoshi

Miri     Zubaan     Ruki    Aor    Unhen    Hijaab    Aaya

Bahut     Buland    Hay    Maot -o- Hayaat     Say    KHUSRAU

Jo    Baargaah-e- Muhabbat    Men     Kaamyaab    Aaya

Poet: Ameer Khusrau

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -