غرض ان کی یہی ہے مجھ کو دیوانہ بنا دینا| امیر خسرو|

غرض ان کی یہی ہے مجھ کو دیوانہ بنا دینا| امیر خسرو|
غرض ان کی یہی ہے مجھ کو دیوانہ بنا دینا| امیر خسرو|

  

غرض ان کی یہی ہے مجھ کو دیوانہ بنا دینا

کبھی چلمن اُٹھا دینا کبھی چلمن گرا دینا

شکستہ پر ہوں جانے کی تمنا ہے نشیمن تک

ذرا اے اُڑنے والو! اپنے پر سے آسرا دینا

یہ کوئی کھیل ہے اے چارہ ساز!  دردِ تنہائی

کسی اچھے بھلے انسان کو دیوانہ بنا دینا

ہماری زندگی کیا ہے ہماری موت کیا شے ہے

تمہاری تیوریوں پر بل تمہارا مسکرا دینا

ستم گر آپ نے دیکھے بھی ہیں ایسے زمانے میں

کسی کا رکھ کے میرے حلق پہ خنجر چلادینا

انہیں آتا ہے نظریں پھیر لینا دل جلا دینا

ہمیں آتا ہے دل کو تھامنا آنسو بہا دینا

اُسے وہ دل میں رکھتا ہے اُسی پرجان دیتا ہے

نگاہِ ناز کہتی ہے کہ خسرو کو دعا دینا

شاعر: امیر خسرو

(انتخاب کلامِ امیر خسرو(اردو کلام):مرتبہ؛مسعود انور علوی کاکوی،سالِ اشاعت،1984)

Garaz    Un    Ki    Yahi    Hay    Mujh    Ko    Dewaana    Bana   Dena

Kabhi    Chilman   Utha    Dena    Kabhi   Chilman    Giraa     Dena

Shakista    Par    Hun    Jaanya    Ki   Tamanna    Hay    Nasheman   Tak

Zaraa    Ay    Urrnay    Waalo !  Apnay    Par    Say    Aasra    Dena

Yeh    Koi    Khail    Hay    Ay    Chaara    Saaz !  Dard -e-Tanhaai

Kisi     Achay    Bhalay    Insaan    Ko     Dewaana    Bana   Dena

Hamaari    Zindagi    Kaya    Hay    Hamaari    Maot    Kia    Shay   Hay

Tumhaara    Taiwarion    Par    Ball  ,    Tumhaara     Muskuraa    Dena

Sitam   Gar    Aap    Nay    Dekhay    Bhi    Hen    Aisay    Zamaanay   Men

Kisi     Ka     Rakh    K    Meray   Halq    Pe    Khanjar    Chalaa   Dena

Unhen    Aat    Hay    Nazren    Phair    Lena    Dil    Jala    Dena

Hamen     Aat     Hay    Dil    Ko    Thaamna    Aansu     Bahaa    Dena

Ussay    Wo    Dil    Men    Rakhta    Hay    Usi    Par    Jaan    Deta    Hay

Nigaah -e-Naaz    Kehti    Hay    Keh    KHUSRAU    Ko    Dua    Dena

Poet: Ameer    Khusrau

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -