روزے تمام ہوں کہیں دن آئے عید کا  | امیر مینائی |

روزے تمام ہوں کہیں دن آئے عید کا  | امیر مینائی |
روزے تمام ہوں کہیں دن آئے عید کا  | امیر مینائی |

  

وہ مست ہوں کہ میں نے شبِ قدر کی دعا کی

روزے تمام ہوں کہیں دن آئے عید کا 

کس گل بدن نے ہاتھ سرِ رہ لگا دیا

پھولوں کی سیج ہے جو جنازہ شہید کا

ہونے نہ پائے غیر بغل گیر یار سے

اللہ یونہی روز گزر جائے عید کا

سارا حساب ختم ہوا حشر ہو چکا

پوچھا گیا نہ حال تمہارے شہید کا

جاکر سفر میں بھول گئے ہم کو وہ امیر

ہاں اور دوستوں نے لکھا خط رسید کا

شاعر: امیر مینائی

(کلامِ امیر مینائی(دیوان):اردو کلام)

Wo     Mast    Hon    Keh    Main    Nay    Shab-e- Qadr    Dua    Maangi

Rozay     Tamaam    Hon     Kahen    Din    Aaey    Eid    Ka

Kiss     Gulbadan    Nay     Haath     Sar-e- Reh     Lagaa    Diya

Phoolon     Ki    Saij    Hay    Jo    Janaaza    Shaheed    Ka

Honay     Na    Paaey    Ghair    Baghl    Geer    Yaar    Say

Allah     Yunhi    Roz    Guzar    Jaaey    Eid    Ka

Saara     Hisaab     Khatm    Hua    Hashr    Ho    Chuka 

Poocha     Gay     Na     Haal     Tumhaaray    Shaheed   Ka

Jaa    Kar     Safr    Men    Bhool    Gaey    Ham    Ko    Wo    AMEER

Haan    Aor     Doston    Nay    Likha    Khat    Raseed    Ka

Poet: Ameer Minai

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -