بہاولپور میں زیادتی سے متاثرہ لڑکی کی خودکشی کے بعد ملزم گرفتار، پولیس اہلکار بھی شکنجے میں آگئے

بہاولپور میں زیادتی سے متاثرہ لڑکی کی خودکشی کے بعد ملزم گرفتار، پولیس ...
بہاولپور میں زیادتی سے متاثرہ لڑکی کی خودکشی کے بعد ملزم گرفتار، پولیس اہلکار بھی شکنجے میں آگئے

  

بہاولپور ، لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) بہاولپور میں زیادتی سے متاثرہ لڑکی کی خودکشی کے بعد پنجاب حکومت اور پنجاب پولیس جاگ گئی اور ملزم گرفتار کرلیا جبکہ مجرمانہ غفلت کے مرتکب اہلکاروں کو معطل کرکے پابندسلاسل کردیا گیا۔

صوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے بتایا کہ ڈی پی او بہاولپور نےفوری ایکشن لیتے ہوئے ملزم لقمان کو گرفتار کر لیا ہے، ملزم کے ساتھ متعلقہ تھانے کا ایس ایچ او،چوکی انچارج بھی پابند سلاسل ہیں ، وزیراطلاعات نے کہا کہ ایس ایچ او اور چوکی انچارج کی کارروائی میں تاخیر نےبچی کوخود کشی پر مجبور کیا،تینوں گرفتار ملزمان کیخلاف دفعہ 322کےتحت مقدمہ درج کیاگیا۔بہاولپور میں زیادتی کا شکار لڑکی نے پولیس کی روایتی بے حسی سے دلبرداشتہ ہو کر مبینہ طور پر خود کشی کر لی تھی۔

یاد رہے کہ جنوبی پنجاب کے ضلع بہاولپور میں ریپ سے متاثرہ ایک لڑکی نے پنجاب پولیس کی بے حسی سے تنگ آکر خود کشی کرلی۔نجی ٹی وی اے آر وائی نیوز کے مطابق محنت کش کی بیٹی کو گزشتہ روز بااثر شخص لقمان نے کھیتوں میں زیادتی  کا نشانہ بنایا۔ متاثرہ کے والد نے واقعے کے خلاف متعلقہ تھانے میں رپورٹ درج کرانے کی کوشش کی لیکن پولیس اہلکار ٹال مٹول سے کام لیتے رہے اور اس کے چکر کٹواتے رہے جس سے دلبرداشتہ ہو کر متاثرہ لڑکی نے سپرے پی کر خود کشی کرلی۔

متاثرہ لڑکی کے والد کے مطابق اس کی بیٹی نے خود سوزی سے پہلے ایک تحریری پیغام بھی چھوڑا ہے جس میں اس نے کہا ہے کہ " ابا کل آپ سر اٹھا کر جیو گے۔"متاثرہ لڑکی کی خود کشی کے بعد ڈی پی او بہاولپور متعلقہ تھانے میں پہنچے اور اہلکاروں کی سرزنش کی اور  امکان ظاہر کیا جارہا تھا  کہ پولیس اہلکاروں کے خلاف بھی کارروائی کی جائے گی۔

مزید :

جرم و انصاف -علاقائی -پنجاب -بہاول پور -