میں مٹ گیا تو وہ بھی مِرے ساتھ مِٹ گیا | امیر مینائی |

میں مٹ گیا تو وہ بھی مِرے ساتھ مِٹ گیا | امیر مینائی |
میں مٹ گیا تو وہ بھی مِرے ساتھ مِٹ گیا | امیر مینائی |

  

میں مٹ گیا تو وہ بھی مرے ساتھ مِٹ گیا

سائے سے خوب حقِ رفاقت ادا ہوا

پچھتا رہے ہیں خون میرا کرکے کیوں حضور

اب اس پہ خاک ڈالیے جو کچھ ہوا ،ہوا

چالاکیاں تو دیکھو مجھے قتل کرکے خود

اوروں سے پوچھتے ہیں یہ کیا ماجرا ہوا

بوسہ طلب کیا تو یہ کہنے لگا وہ تب

قدر ت خدا کی تم کو بھی یہ حوصلہ ہوا

حور آگئی نظر کہ پری کوئی دیکھ لی

سودا سا ہے امیر کو کیا جانے کیا ہوا

شاعر: امیر مینائی

(کلامِ امیر مینائی(دیوان):اردو کلام)

Main     Mitt     Gaya    To    Wo    Bhi    Miray    Saath    Mitt    Gaya

Saaey   Say    Khoob     Haq-e-Rafaaqat     Adaa      Hua

Pachta    Rahay    Hen    Khoon    Mira    Kar    K    Kiun   Huzoor

Ab    Uss    Pe    Khaak    Daaliay    Jo    Kuch    Hua  ,   Hua

Chalaakiyaan   To   Dekho   Mujhay   Qatl   Kar   K   Khud

Aoron    Sasy    Poochhtay    Hen   Yeh    Kiya    Maajra   Hua

Bosa    Talab    Kiya   To    Yeh    Kehnay    Laga    Wo  Tab

Qudrat    Khuda      Ki   Tum    Ko    Bhi   Yeh    Haosla    Hua

Hoor    Aa    Gai   Nazar    Keh     Pari     Koi    Dekh    Li

Saoda   Sa   Hay  AMEER     Ko    Kaya    Jaaanay    Kaya   Hua

Poet: Ameer     Minai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -