اور تھوڑی سی شبِ وصل بڑھا دے یا رب | امیر مینائی |

اور تھوڑی سی شبِ وصل بڑھا دے یا رب | امیر مینائی |
اور تھوڑی سی شبِ وصل بڑھا دے یا رب | امیر مینائی |

  

اور تھوڑی سی شبِ وصل بڑھا دے یا رب

صبح نزدیک ہمیں اُن سے ہے کیا کیا کہنا

لاسکو گے نہ ذرا جلوۂ دیدار کی تاب

ارنی منہ سے نہ اے حضرتِ موسیٰ کہنا

کیسے نادان ہیں جو  اچھوں کے برا کہتے ہیں

ہو برا بھی تو اُسے چاہیے اچھا کہنا

دمِ آخر تو بتو!  یادِ  خدا کرنے دو

زندگی بھر تو کیا میں نے تمہارا  کہنا

شوق کعبے لیے جاتا ہے ہوس جانبِ دیر

میرے اللہ بجا لاؤں میں کس کا کہنا

چستی طبع سے اُستاد کا ہے قول امیر

ہو زمیں سست مگر چاہیے اچھا کہنا

شاعر: امیر مینائی

(کلامِ امیر مینائی(دیوان):اردو کلام)

Aor    Thorri   Si    Shab-e- Wasl    Barrha    Day   Ya   RAB

Subh    Nazdeek    Hamen    Un    Say    Hay    Kiya    Kiya   Kehna

La    Sako    Na    Zara    Jalwa-e- Dedaar    Ki    Taab

Armani    Munh    Say Na    Ay    HAZRAT -e-MUSA    Kehna

Kaisay    Nadaan    Hen    Jo    Achhon    Ko    Bura    Kehtay   Hen 

Ho    Bura    Bhi   To    Usay    Chaahiay    Achha   Kehna

Dam-e- Aakhir    To    Buto    Yaad-e- KHUDA    Karnay   Do

Zindagi    Bhar   To Kia    Main    Nay   Tumhaara   Kehna

Shaoq    Kaabay    Liay    Jaata    Hay    Hawas   Jaanib -e- Dair

Meray    ALLAH    Bajaa    Laaun    Main    Kiss    Ka   Kehna

Chusti -e-Tabaa    Say    Ustaad    Ka    Hay    Qaol   AMEER

Ho    Zameen    Sust    Magar    Chaahiay   Acha    Kehna

Poet: Ameer     Minai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -