سر بلندوں میں سرنگوں آیا | انجم سلیمی |

سر بلندوں میں سرنگوں آیا | انجم سلیمی |
سر بلندوں میں سرنگوں آیا | انجم سلیمی |

  

سر بلندوں میں سرنگوں آیا

میں اگر آیا بھی تو یوں آیا

کوئی آواز ہی نہیں دیتا

کس کی آواز پر کہوں آیا

ہے یہاں کوئی پوچھنے والا

میں یہاں کیسے اور کیوں آیا

اتنی شدت سے کس نے یاد کیا

ہچکی آنے سے منہ میں خوں آیا

آہ بھر کر میں ہو گیا خالی

رو لیا ہے تو کچھ سکوں آیا

ریت سے ناؤ  بھر   گئی میری

موج میں دشتِ نیلگوں آیا

رونا کس بات کا ، عزا دارو

یوں گیا اور بس میں یوں آیا

دوست پھنکارتا ہوا انجم

آستیں سے مرے دروں آیا

شاعر: انجم سلیمی

(شعری مجموعہ: "میں" سال اشاعت(دوسراایڈیشن)، 2019 )

Sar   Bulanndon    Men    Sar   Nigoon   Aaya

Main    Agar    Aaya    Bhi   To    Yun     Aaya

Koi     Awaaz    Hi    Nahen    Deta

Kiss    Ki     Aawaaz    Par    Kahun    Aaya

Hay    Yahaan    Koi    Poo   chhnay    Waala

Main    Yahaan    Kaisay    Aor    Kiun    Aaya

Itni    Shiddat    Say    Kiss    Nay    Yaad    Kiya

Hichki    Aanay    Say    Munh    Men    Khoon    Aaya

Aah    Bhar    Kar    Main   Ho    Gaya    Khaali

Ro    Liya     Hay    To    Kuch    Sukoon    Aaya

Rait     Say    Naao    Bhar    Gai    Meri

Maoj    Men    Dasht-e  - Neelgoon     Aaya

Rona     Kiss    Baat    Ka      Azaadaaro

Yeh     Gaya      Aor    Bass     Men    Yun    Aaya

Dost       Phankaarta      Hua     ANJUM

Aasteen     Say     Miray    Duroon    Aaya

Poet: Anjum    Saleemi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -