پلٹ پلٹ کےمجھے دیکھتا ہے جاتے ہوئے| انجم سلیمی |

پلٹ پلٹ کےمجھے دیکھتا ہے جاتے ہوئے| انجم سلیمی |
پلٹ پلٹ کےمجھے دیکھتا ہے جاتے ہوئے| انجم سلیمی |

  

پلٹ پلٹ کے مجھے دیکھتا ہے جاتے ہوئے

جدا کیا ہے جسے میں نے مسکراتے ہوئے

یقیں اسے بھی نہیں تھا مری محبت پر

میں آزمایا گیا اس کو آزماتے ہوئے

مری ذرا سی اُداسی پہ رونے والے بتا

ذرا بھی دل نہ دُکھا آج د ل دُکھاتے ہوئے

پھر ایک روز مجھے دیکھنے لگا وہ بھی

میں دیکھتا تھا جسے روز آتے جاتے ہوئے

سحر ہوئی تو کہیں جا کے محویت ٹوٹی

میں اُس کو دیکھ رہا تھا دیا جلاتے ہوئے

تو آپ کچے گھڑے پر سوار ہے عشقا

تو خود بھی ڈوب مرے گا مجھے بچاتے ہوئے

ٹہلتے پھرتے تھے ہاتھوں ہاتھ ڈالے ہم

 ٹھہر گئے کئی لوگ آتے جاتے ہوئے

شاعر:ا نجم سلیمی

(شعری مجموعہ: "میں" سال اشاعت(دوسراایڈیشن)، 2019 )

Palatt     Platt    K    Mujhay    Dekhta    Hay    Jaatay    Huay

Juda    Kiya    Hay    Jisay    Main    Nay    Muskuraatay    Huay

Yaqeen    Usay    Bhi    Nahen    Tha    Miri    Muhabbat    Par

Main    Aazmaaya    Gaya     Uss    Ko     Aazmaatay    Huay

Miri    Zara    Si    Udaasi   Pe    Ronay    Walay    Bataa

Zara   Bhi    Dil    Na    Dukha    Aaj    Dil    Dukhaatay   Huay

Phir    Aik    Roz    Mujhay    Dekhnay    Laga    Wo    Bhi

Main    Dekhta    Tha    Jisay    Roz    Aaatay    Jaatay    Huay

Sahar    Hui    To    Kahen    Ja    K    Mehviyat   Tooti

Main    Uss    Ko    Dekh    Raha   Tha    Diya     Jalaatay    Huay

Tu    Aap    Kachay   Gharray    Par    Sawaar    Hay   Eshqa

Tu     Khud    Bhi    Doob    Maray    Ga     Mujhay    Bachaatay   Huay

Tahaltay    Phirtay    Thay     Haathon     Men     Haath    Daalay    Ham

Thahar    Gaey     Kai     Log    Aatay     Jaatay    Huay

Poet: Anjum     Saleemi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -