دن لے کے جاؤں ساتھ اسے شام کر کے آؤں  | انجم سلیمی |

دن لے کے جاؤں ساتھ اسے شام کر کے آؤں  | انجم سلیمی |
دن لے کے جاؤں ساتھ اسے شام کر کے آؤں  | انجم سلیمی |

  

دن لے کے جاؤں ساتھ اسے شام کر کے آؤں 

بے کار کے سفر میں کوئی کام کر کے آؤں 

بے مول کر گئیں مجھے گھر کی ضرورتیں 

اب اپنے آپ کو کہاں نیلام کر کے آؤں 

میں اپنے شور و شر سے کسی روز بھاگ کر 

اک اور جسم میں کہیں آرام کر کے آؤں 

کچھ روز میرے نام کا حصہ رہا ہے وہ 

اچھا نہیں کہ اب اسے بد نام کر کے آؤں 

انجمؔ میں بد دعا بھی نہیں دے سکا اسے 

جی چاہتا تو تھا وہاں کہرام کر کے آؤں 

شاعر: انجم سلیمی

(شعری مجموعہ: "میں" سال اشاعت(دوسراایڈیشن)، 2019 )

Din     Lay    K     Jaaun     Saath   ,  Usay    Shaam    Kar    K    Aaun

Be   Kaar    K    Safar    Meen    Koi    Kaam    Kar    K    Aaun

Be Mol     Kar    Gaen    Mujhay    Ghar    Ki    Zaroorten

Ab    Apnay    Aap    Ko    Kahan    Nelaam    Kar    K   Aaun

Main     Apnay     Shor -o- Shar    Say    Kisi     Roz    Bhaag    Kar 

Ik    Aor    Jism    Men    Kahen     Aaraam    Kar    K   Aaun

Kuch    Roz    Meray    Naam   Ka    Hissa    Raha    Hay   Wo

Acha    Nahen    Keh    Ab    Usay    Badnaam    Kar    K    Aaun

ANJUM     Main     Bad Dua     Bhi    Nahen    Day    Saka   Usay

Ji    Chaahta    To    Tha    Wahaan    Kohraam    Kar    K    Aaun

Poet: Anjum    Saleemi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -