سحر کو کھوج چراغوں پہ انحصار نہ کر  | انجم سلیمی |

سحر کو کھوج چراغوں پہ انحصار نہ کر  | انجم سلیمی |
سحر کو کھوج چراغوں پہ انحصار نہ کر  | انجم سلیمی |

  

سحر کو کھوج چراغوں پہ انحصار نہ کر 

ہوا سے دوستی رکھ اس کا اعتبار نہ کر 

یقین کر ، او محبت!  یہی مناسب ہے 

زیادہ دن مری صحبت کو اختیار نہ کر 

یہ کوئی رشتہ نہیں ہے فقط ندامت ہے 

تو مجھ سے عمر میں کم ہے سو مجھ سے پیار نہ کر 

مجھے پتہ ہے کہ برباد ہو چکا ہوں میں 

تو میرا سوگ منا مجھ کو سوگوار نہ کر 

ہے کون کون مرے ساتھ اس مصیبت میں 

میں اپنے ساتھ نہیں ہوں مجھے شمار نہ کر 

میں خاک! خود تجھے لبیک کہنے والوں میں 

مجھے بلاوا نہ دے میرا انتظار نہ کر 

شاعر: انجم سلیمی

(شعری مجموعہ: "میں" سال اشاعت(دوسراایڈیشن)، 2019 )

Sahar     Ko     Khoj    ,    Charaaghon    Pe     Inhasaar    Na   Kar

Hawaa   Say    Dosti   Rakh  , Iss    Ka    Aitbaar    Na   Kar

Yaqeen    Kar   ,   O    Muhabbat !    Yahi    Munaasib   Hay

Zayaada     Din    Miri    Sohbat     Ko    Ikhtayaar   Na   Kar 

Yeh    Koi    Rishta    Nahen    Hay   Faqat    Nadaamat   Hay

Tu    Mujh    Say    Umr    Men    Kam    Hay    So    Mujh    Say    Payaar    Na    Kar 

Mujhay    Pata    Hay    Keh    Barbaad    Ho   Chuka    Hun   Main

Tu    Mera    Sog    Manaa    Mujh    Ko     Sogwaar    Na   Kar

Hay    Kon    Kon    Miray    Saath    Iss    Museebat    Men

Main    Apnay    Saath    Nahen    Hun  ,   Mujhay    Shumaar    Na   Kar

Main    Khaak  !   Khud     Tujhay     Labbaik     Kehnay    Waala    Hun

Mujhay     Bulaawea    Na     Day   ,    Mera    Intezaar    Na    Kar

Poet: Anjum    Saleemi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -