شاہد خاقان عباسی کا ٹیکس ایک سال میں 30 لاکھ سے بڑھ کر 24 کروڑ کیسے ہوگیا؟ خود ہی بتادیا

شاہد خاقان عباسی کا ٹیکس ایک سال میں 30 لاکھ سے بڑھ کر 24 کروڑ کیسے ہوگیا؟ خود ...
شاہد خاقان عباسی کا ٹیکس ایک سال میں 30 لاکھ سے بڑھ کر 24 کروڑ کیسے ہوگیا؟ خود ہی بتادیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ ان کی کئی سال سے پھنسی ہوئی رقم انہیں 2018 میں ملی جس کی وجہ سے انہوں نے ٹیکس زیادہ ادا کیا ہے۔

ایف بی آر کی جانب سے جاری سال 2018 کی ٹیکس ڈائریکٹری کے مطابق شاہد خاقان عباسی نے 24 کروڑ روپے سے زیادہ کا ٹیکس ادا کیا ہے اور وہ سب سے زیادہ ٹیکس ادا کرنے والے رکن پارلیمنٹ ہیں۔

نجی ٹی وی جیو نیوز کے پروگرام میں بتایا گیا کہ شاہد خاقان عباسی نے 2017 میں 30 لاکھ روپے ٹیکس دیا اور ان کی آمدنی ایک کروڑ 20 لاکھ روپے تھی لیکن ایک سال میں ان کی آمدنی میں اضافہ کیسے ہوا؟اس سوال کا جواب دیتے ہوئے سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ان کے ایئر بلیو ایئر لائن میں کئی سال سے منافع کے پیسے رکے ہوئے تھے جو کمپنی نے 2018 میں ادا کیے جس کی وجہ سے ان کی آمدنی میں اضافہ ہوا ۔ انہیں جتنی رقم موصول ہوئی انہوں نے اس پر اتنا ہی ٹیکس ادا کردیا۔انہوں نے کہا کہ ٹیکس دینا کسی پر احسان نہیں ہے، یہ بطور شہری ہماری ذمہ داری ہے۔ ارکان پارلیمنٹ کو اتنا ٹیکس دینا چاہیے جو ان کے لائف سٹائل سے مطابقت رکھتا ہو۔

مزید :

قومی -بزنس -