" اگلی باری ملی تو کسی کو وزیر نہیں بنائیں گے جس کی دولت باہر پڑی ہو"

" اگلی باری ملی تو کسی کو وزیر نہیں بنائیں گے جس کی دولت باہر پڑی ہو"

  

چارسدہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )  پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان نے واضح اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اگلی باری ملی تو کسی ایسے شخص کو وزیر نہیں بنایا جائے گا جس کی دولت بیرون ملک پڑی ہو۔

نجی ٹی وی " جیو نیوز" کے مطابق  چارسدہ  میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم  عمران خان نے کہا کہ اربوں کی کرپشن کے کیسز میں گواہوں کی اموات کی تحقیات ہوں تو علم ہوگا کہ وہ ہارٹ اٹیک س مرے نہیں بلکہ مروائے گئے ہیں ، حکمرانوں نے اپنے کرپشن کیسز ختم کرنا شروع کر دیے ہیں ،  حکومتی ٹولے نے آتے ہی اپنے خلاف کرپشن کے کیسز ختم کرنا شروع کئے ، اطلاعات ہیں کہ رمضان شوگر ملز کا کیس بھی معاف ہو رہا ہے ۔

نجی ٹی وی کے مطابق عمران خان کا کہنا تھا کہ  جب ہمیں حکومت ملی تو بیرونی قرضے  20 ارب ڈالرز تھے ، ہم حکومت چھوڑ کر گئے تو ترسیلات زر 31ارب ڈالرز اور زرمبادلہ  کے ذخائر 16 ارب ڈالر تھے ، دو سال کورونا کے باوجود ہم نے بہتر حالت میں معیشت کو چھوڑا ،  سازش کے تحت قوم پر امپورٹڈ حکومت مسلط کی گئی ۔ وباء کے باوجود ہمارے دور میں برآمدات اور ترسیلات زر ریکارڈ رہیں ، ہماری آخری دو سال معاشی کارکردگی کے 17 سال میں سب سے بہتر رہے ۔

چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ مہنگائی پر فضل الرحمان نے دو بار دھرنے دیے ، بلاول بھٹو نے لانگ مارچ کی، ہماری حکومت واحد حکومت ہے جسے کرپشن کی وجہ سے نہیں گرایا گیا ، مگر انہوں نے آتے ہی خود پر درج  کرپشن کے مقدمات ختم کئے  اور  11سو ارب روپے کرپشن کے کیسز معاف کرانا شروع کئے ۔ ڈالر کی قیمت اوپر گئی اور عوام کی دولت میں  30 فیصد کمی آئی ، ڈالر اوپر گیا تو حکمرانوں کی دولت میں  30 فیصد اضافہ ہو گیا ، جب کے کاروبار ، جائیدادیں ، پیسہ سب کچھ باہر پڑا ہوا ہے ان کو کبھی  ووٹ نہ دینا ،  ہم بھی ایسے کسی شخص کو وزیر نہیں بنائیں گے ۔

 سابق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کہہ چکا ہے کہ پاکستان سری لنکا کی صورتحال کی طرف جا رہاہے ، آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک  کا کہنا ہے کہ اس حکومت سے معیشت نہیں سنبھل سکتی ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -