کہروڑ پکا،غلط ڈراپ دینے سے طالبعلم کی بینائی متا ثر 

کہروڑ پکا،غلط ڈراپ دینے سے طالبعلم کی بینائی متا ثر 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ملتان) وقا ئع  نگار) کہروڑ پکا کے علاقہ محلہ ٹبہ سادات کی رہائشی سیدہ فوزیہ عباس، سید شاہد عباس نے 11سالہ (بقیہ نمبر2صفحہ6پر)
پانچویں کلاس کے طالبعلم متاثرہ سید نذر حسین کے ہمراہ پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم اپنے گیارہ سالہ بیٹے سید نذر حسین کو 22فروری 2022کوٹی ایچ کیو کہروڑ پکا آنکھوں کا معائنہ کرانے کے لئے لے گئے لیکن وہاں پر آئی سپیشلسٹ سرجن ڈاکٹر امتیاز اسلم 6ماہ کی چھٹی پر گئے ہوئے تھے لیکن ان کی جگہ پر ڈاکٹر بلقیس موجود تھیں جنہوں نے میرے بیٹے کی آنکھوں کا معائنہ کیا اور عینک کا نمبر و ڈراپ لکھ کر دیئے جب ہم نے ڈراپ لیکر بچے کی آنکھوں میں ڈالنے شروع کئے تو بچے کی حالت مزید خراب ہو گئی اور اس کے سر میں شدید درد اور آنکھوں سے پانی بہنے لگا اور ہمارے بچے کی آنکھیں اس حد تک متاثرہ ہو گئی ہیں کہ وہ بمشکل دیکھ پا رہا تھا تو ہم نے اپنے بچے کو بہاولپور میں آئی سپیشلسٹ ڈاکٹر سلمان مقبول کو چیک کرایا تو پتہ چلا کہ مذکورہ ڈاکٹر بلقیس نے عینک کا نمبر غلط ہونے کے ساتھ ساتھ ڈراپ بھی غلط لکھ دیئے تھے جب ہم نے ٹی ایچ کیو کہروڑ پکا میں ڈاکٹر بلقیس بارے پتہ لگایا تو معلوم ہوا کہ بلقیس نامی خاتون ڈاکٹر نہیں ہے بلکہ وہ اسی مذکورہ ہسپتال کے ڈرگ انسپکٹر کی اہلیہ ہے جو کہروڑ پکا میں موجودہماری اطلاعات کے مطابق 631عطائیوں سے ماہانہ لاکھوں روپے کی بھتہ وصولی کرتا ہے جس کی وجہ سے کہروڑ پکا کے مکین موت کے منہ میں پہنچ رہے ہیں انہوں نے کہا کہ جب ہم نے مذکورہ بلقیس نامی خاتون اور ہسپتال انتظامیہ کے خلاف کاروائی کے لئے عدالت میں رٹ دائر کی تو مذکورہ ہسپتال انتظامیہ نے انکوائری کے لئے ڈاکٹر محمد شریف کی قیادت میں دو رکنی کمیٹی بنائی اور ہمیں بھی بلایا گیا لیکن وہاں پر کمیٹی میں شامل مزید دو ڈاکٹر مقبول حسین، ڈاکٹر احمد خادم موجود نہیں تھے لیکن ڈاکٹر محمد شریف نے معاملے کو دبانے کے لئے ہماری منتیں شروع کردیں اور اب ہم پر مذکورہ ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے صلح کے لئے دبا ڈالا جارہا ہے انہوں نے کہا کہ میرے بچے نے پاک فوج میں جانے کا فیصلہ کیا ہوا تھا لیکن افسوس کہ مذکورہ ہسپتال انتظامیہ کی نااہلی کی وجہ سے میرے بچے کی آنکھیں خراب ہو کر رہ گئیں انہوں نے چیف جسٹس آف پاکستان، چیف آف آرمی سٹاف، وزیراعظم، وزیراعلی پنجاب، سیکریٹری صحت پنجاب، آئی جی پنجاب اور دیگر حکام بالا سے مطالبہ کیا ہے کہ ٹی ایچ کیو کہروڑ پکاہسپتال انتظامیہ کے خلاف فی الفور کاروائی کی جائے اور بلقیس نامی خاتون اور اس کے خاوند کے خلاف بھی کاروائی کی جائے جن کی وجہ سے روزانہ کئی شہریوں کی آنکھیں ضائع ہو رہی ہیں اور درجنوں شہری موت کے منہ میں پہنچ رہے ہیں