پشاور،افطاری اور سحری میں بجلی کی آنکھ مچولی، شہری پریشان 

پشاور،افطاری اور سحری میں بجلی کی آنکھ مچولی، شہری پریشان 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


       پشاور(سٹی رپورٹر) پشاور میں سحری و افطاری کے دوران بجلی کی آنکھ مچولی نے شہریوں کی مشکلات میں اضافہ کردیا۔ تفصیلات کے مطابق واپڈا حکام نے رمضان المبارک سے قبل سحری و افطاری کے اوقات میں بجلی لوڈشیڈنگ نہ کرنے کا اعلان کیا تھا تاہم اس اعلان کو عملی جامہ نہیں پہنایا گیا اور سحری و افطاری میں بار بار بجلی کی بندش کے باعث شہریوں میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی بندش کے باعث سحری و افطاری کے دوران خواتین کو امور خانہ داری میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت فوری طور پر بجلی کی بار بار بندش کا نوٹس لے بصورت دیگر پشاور کی سڑکوں پر رمضان المبارک کے دوران روزے کی حالت میں بھر پور احتجاج کریں گے جس کی تمام تر ذمہ داری متعلقہ حکام پر عائد ہوگی میئر پشاور حاجی زبیر علی نے کہا ہے کہ شہر کی تعمیر و ترقی کیلئے مختلف اداروں پر مشتمل بورڈ بنائیں گے اور ورک پلان پر مشاورت کے بعد شہر میں ترقیاتی کام کریں گے تاکہ بار بار ترقیاتی کام کی توڑ پھوڑ نہ ہواور حکومتی فنڈز ضائع نہ ہو اس مقصد کیلئے اداروں کیساتھ ملکر ٹیم ورک کے طور پر کام کرینگے تاکہ شہریوں کو سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جا سکے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز کیپٹل میٹرو پولیٹن گورنمنٹ پشاور کے افسران کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں ڈائریکٹر ایسٹ وقاص علی شاہ‘ ڈائریٹر ویسٹ قدیر نصیر‘ ڈائریکٹر اسٹیٹ میاں  انیس‘ ڈائریکٹر فنانس شوکت علی خان اور دیگرافسران بھی موجود تھے اس موقع پر کیپٹل میٹرو پولیٹن گورنمنٹ پشاور کے افسران نے ریونیو جنریشن‘ ٹیکس کلیکشن‘ نقشہ جات‘ کمرشلائزیشن‘ سکولز ٹائم تبدیلی‘ تجاوزات خاتمے اور دیگر امور پر تفصیلی بات چیت کی اور باقاعدہ مختلف شعبوں میں تجاویز پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ میئر پشاور حاجی زبیر علی نے کہا کہ شہر میں ٹریفک نظام کی بہتری کو یقینی بنانے کیلئے سکول اوقات کار میں تبدیلی کی جائیگی تاکہ شہر میں ٹریفک کا نظام بہتر ہو اور شہریوں کو کسی قسم کی مشکلات درپیش نہ ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پشاور شہر میں تجاوزات کیخلاف گرینڈ آپریشن کیا جائیگا تاکہ سڑکیں ٹریفک کیلئے کھلی ہوں اور راہ گیروں کو مشکلات نہ ہوں۔ انہوں نے کہا کہ مین شاہراہوں سمیت متصل روڈ پر سٹریٹ  لائٹس کی تنصیب کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ افسران اپنے ماتحت سٹاف سے کام لیں اور ٹی ایم ایز کی کارکردگی کو مزید بہتر بنائیں تاکہ بلدیاتی نظام کے ثمرات عوام تک پہنچ سکیں کیونکہ بلدیاتی نظام کے قیام کا مقصد بہتر میونسپل سہولیات کی فراہمی ہے جس کو ہر صورت میں ممکن بنانا انتہائی ضروری ہے تاکہ ہم جس مقصد کیلئے آئے ہیں اس میں ہمیں بھر پور کامیابی مل سکے اور عوام کو بھی فائدہ ہو۔ انہوں نے مزید کہا کہ ٹی ایم ایز میں جو بھی مسائل ہوں اس کے حل کیلئے ترجیحی بنیادوں پر ا قدامات کئے جائیں گے اس سلسلے میں افسران ضروریات بارے آگاہی دینے سمیت ٹی ایم ایز کی بہتری کیلئے تجاویز دیں جس پر غور کیا جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ میں مواصلاتی نظام کی بہتری کیلئے متعلقہ اداروں کیساتھ باقاعدہ میٹنگز کریں گے تاکہ شہریوں کو سفری سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جا سکے اور انہیں منٹوں کا سفر گھنٹوں میں طے نہ کرنا پڑے۔ اجلاس کے دوران کیپٹل میٹرو پولیٹن گورنمنٹ پشاور کے ا فسران کو ہدایت کی کہ وہ خواتین افسران  کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کریں تاکہ وہ احسن طریقے سے ڈیوٹی انجام دیں اور انہیں کسی قسم کی مشکلات درپیش نہ ہوں۔